عنوان: کیا ضائع ہونے والا حمل آخرت میں والدین کی سفارش کرے گا؟ (106290-No)

سوال: مفتی صاحب ! ایک عورت کو 5 ماہ حمل رہا، پھر بچہ پیٹ میں ہی ختم ہو گیا، 16 یا کچھ زیادہ دن کے بعد پتہ چلا، جب تک کہ بچہ گل گیا تھا، کافی مشکل سے صفائی ہوئی اور اس گلے ہوئے گوشت اور ہڈیوں کو ہسپتال والوں نے ضائع کر دیا، تو ایسی صورت میں کیا وہ بچہ بھی جس کا کوئی نام و نشان نہیں، جنت میں ہو گا اور ہمارا ہی کہا جائے گا؟

جواب: چار ماہ یا اس سے زیادہ مدت کا ضائع ہونے والا حمل جنت میں جائے گا، اور اپنے والدین کو جنت لےجانے کی سفارش بھی کرے گا، نبی کریم ﷺ کا فرمان ہے :

والَّذي نفسي بيدِه إنَّ السِّقطَ ليَجرُّ أمَّهُ بسَرَرِه إلى الجنَّةِ إذا احتَسبَتهُ(صحيح ابن ماجه)۔

ترجمہ:

قسم ہے اس ذات کی جس کے ہاتھ میں میری جان ہے۔ ناتمام بچہ اپنی ماں کو آنول (جس کے ذریعے بچے کو رحم مادر میں غذا مہیا کیجاتی ہے)کے ذریعے سے کھینچ کر جنت میں لے جائے گا، جبکہ اس نے اس پر صبر کیا ہو۔

لہذا اس حدیث سے ثابت ہوا کہ صورت مسئولہ میں ضائع ہونے والا حمل جنت میں جائے گا، اور اس کا نسب اپنے حقیقی والدین سے ہی ثابت ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل :

کذا فی المحیط البرھانی :

ﻭﻓﻲ «اﻟﻤﻨﺘﻘﻰ» : ﻗﺎﻝ ﺃﺑﻮ ﻳﻮﺳﻒ ﺭﺣﻤﻪ اﻟﻠﻪ: ﻭﺇﺫا ﺃﻗﺮ اﻟﺮﺟﻞ ﺃﻥ ﺟﺎﺭﻳﺘﻪ ﻫﺬﻩ ﻗﺪ ﺃﺳﻘﻄﺖ ﻣﻨﻪ، ﻓﻬﺬا ﺇﻗﺮاﺭ ﺃﻧﻬﺎ ﺃﻡ ﻭﻟﺪﻩ، ﻗﺎﻝ: ﺇﻧﻤﺎ ﻳﻘﻊ اﺳﻢ اﻟﺴﻘﻂ ﻋﻠﻰ ﻣﺎ ﺗﺒﻴﻦ ﺧﻠﻘﻪ، ﺃﻣﺎ ﺇﺫا ﻟﻢ ﻳﺘﺒﻴﻦ ﺧﻠﻘﻪ ﻓﻼ ﻳﺴﻤﻰ ﺳﻘﻄﺎ؛ ﻷﻧﻪ ﻻ ﻳﺪﺭﻯ ﻣﺎ ﻫﻮ۔

ج : 4، ص : 76، ط : دارالکتب العلمیة)

کذا فی البحر الرائق :

(ﻗﻮﻟﻪ: ﻭاﻟﺴﻘﻂ ﺇﻥ ﻇﻬﺮ ﺑﻌﺾ ﺧﻠﻘﻪ ﻭﻟﺪا) :
ﻭﻫﻮ ﺑﺎﻟﻜﺴﺮ ﻭاﻟﺘﺜﻠﻴﺚ ﻟﻐﺔ، ﻛﺬا ﻓﻲ اﻟﻤﺼﺒﺎﺡ ﻭﻫﻮ اﻟﻮﻟﺪ اﻟﺴﺎﻗﻂ ﻗﺒﻞ ﺗﻤﺎﻣﻪ، ﻭﻫﻮ ﻛﺎﻟﺴﺎﻗﻂ ﺑﻌﺪ ﺗﻤﺎﻣﻪ ﻓﻲ اﻷﺣﻜﺎﻡ، ﻓﺘﺼﻴﺮ اﻟﻤﺮﺃﺓ ﺑﻪ ﻧﻔﺴﺎء ﻭﺗﻨﻘﻀﻲ ﺑﻪ اﻟﻌﺪﺓ ﻭﺗﺼﻴﺮ اﻷﻣﺔ ﺑﻪ ﺃﻡ ﻭﻟﺪ ﺇﺫا اﺩﻋﺎﻩ اﻟﻤﻮﻟﻰ، ﻭﻳﺤﻨﺚ ﺑﻪ ﻟﻮ ﻛﺎﻥ ﻋﻠﻖ ﻳﻤﻴﻨﻪ ﺑﺎﻟﻮﻻﺩﺓ، ﻭﻻ ﻳﺴﺘﺒﻴﻦ ﺧﻠﻘﻪ، ﺇﻻ ﻓﻲ ﻣﺎﺋﺔ ﻭﻋﺸﺮﻳﻦ ﻳﻮﻣﺎ۔

ج : 1، ص : 229، ط : دارالکتاب الاسلامی)

کذا فی تفسیر ابن کثیر :

ﻗﺎﻝ ﻣﺠﺎﻫﺪ ﻓﻲ ﻗﻮﻟﻪ ﺗﻌﺎﻟﻰ: ﻣﺨﻠﻘﺔ ﻭﻏﻴﺮ ﻣﺨﻠﻘﺔ ﻗﺎﻝ: ﻫﻮ اﻟﺴﻘﻂ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﻭﻏﻴﺮ ﻣﺨﻠﻮﻕ ، ﻓﺈﺫا ﻣﻀﻰ ﻋﻠﻴﻬﺎ ﺃﺭﺑﻌﻮﻥ ﻳﻮﻣﺎ ﻭﻫﻲ ﻣﻀﻐﺔ، ﺃﺭﺳﻞ اﻟﻠﻪ ﺗﻌﺎﻟﻰ ﻣﻠﻜﺎ ﺇﻟﻴﻬﺎ ﻓﻨﻔﺦ ﻓﻴﻬﺎ اﻟﺮﻭﺡ ﻭﺳﻮاﻫﺎ ﻛﻤﺎ ﻳﺸﺎء اﻟﻠﻪ ﻋﺰ ﻭﺟﻞ ﻣﻦ ﺣﺴﻦ ﻭﻗﺒﺢ، ﻭﺫﻛﺮ ﻭﺃﻧﺜﻰ، ﻭﻛﺘﺐ ﺭﺯﻗﻬﺎ ﻭﺃﺟﻠﻬﺎ، ﻭﺷﻘﻲ ﺃﻭ ﺳﻌﻴﺪ.

ﻛﻤﺎ ﺛﺒﺖ ﻓﻲ اﻟﺼﺤﻴﺤﻴﻦ ﻣﻦ ﺣﺪﻳﺚ اﻷﻋﻤﺶ ﻋﻦ ﺯﻳﺪ ﺑﻦ ﻭﻫﺐ ﻋﻦ اﺑﻦ ﻣﺴﻌﻮﺩ ﻗﺎﻝ: ﺣﺪﺛﻨﺎ ﺭﺳﻮﻝ اﻟﻠﻪ ﺻﻠﻰ اﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﻭﻫﻮ اﻟﺼﺎﺩﻕ اﻟﻤﺼﺪﻭﻕ «ﺇﻥ ﺧﻠﻖ ﺃﺣﺪﻛﻢ ﻳﺠﻤﻊ ﻓﻲ ﺑﻄﻦ ﺃﻣﻪ ﺃﺭﺑﻌﻴﻦ ﻟﻴﻠﺔ، ﺛﻢ ﻳﻜﻮﻥ ﻋﻠﻘﺔ ﻣﺜﻞ ﺫﻟﻚ، ﺛﻢ ﻳﻜﻮﻥ ﻣﻀﻐﺔ ﻣﺜﻞ ﺫﻟﻚ، ﺛﻢ ﻳﺒﻌﺚ اﻟﻠﻪ ﺇﻟﻴﻪ اﻟﻤﻠﻚ ﻓﻴﺆﻣﺮ ﺑﺄﺭﺑﻊ ﻛﻠﻤﺎﺕ، ﺑﻜﺘﺐ ﺭﺯﻗﻪ ﻭﻋﻤﻠﻪ ﻭﺃﺟﻠﻪ، ﻭﺷﻘﻲ ﺃﻭ ﺳﻌﻴﺪ، ﺛﻢ ﻳﻨﻔﺦ ﻓﻴﻪ اﻟﺮﻭﺡ»۔

(ج : 5، ص : 347، ط : دارالکتب العلمیة)

کذا فی مرقاة المفاتیح :

1754 - ﻭﻋﻦ ﻣﻌﺎﺫ ﺑﻦ ﺟﺒﻞ ﻗﺎﻝ: ﻗﺎﻝ ﺭﺳﻮﻝ اﻟﻠﻪ ﺻﻠﻰ اﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ: «ﻣﺎ ﻣﻦ ﻣﺴﻠﻤﻴﻦ ﻳﺘﻮﻓﻰ ﻟﻬﻤﺎ ﺛﻼﺛﺔ ﺇﻻ ﺃﺩﺧﻠﻬﻤﺎ اﻟﻠﻪ اﻟﺠﻨﺔ ﺑﻔﻀﻞ ﺭﺣﻤﺘﻪ ﺇﻳﺎﻫﻤﺎ، ﻓﻘﺎﻟﻮا: ﻳﺎ ﺭﺳﻮﻝ اﻟﻠﻪ، ﺃﻭ اﺛﻨﺎﻥ؟ ﻗﺎﻝ: ﺃﻭ اﺛﻨﺎﻥ. ﻗﺎﻟﻮا: ﺃﻭ ﻭاﺣﺪ؟ ﻗﺎﻝ: ﺃﻭ ﻭاﺣﺪ، ﺛﻢ ﻗﺎﻝ: ﻭاﻟﺬﻱ ﻧﻔﺴﻲ ﺑﻴﺪﻩ، ﺇﻥ اﻟﺴﻘﻂ ﻟﻴﺠﺮ ﺃﻣﻪ ﺑﺴﺮﺭﻩ ﺇﻟﻰ اﻟﺠﻨﺔ ﺇﺫا اﺣﺘﺴﺒﺘﻪ» . ﺭﻭاﻩ ﺃﺣﻤﺪ، ﻭﺭﻭﻯ اﺑﻦ ﻣﺎﺟﻪ ﻣﻦ ﻗﻮﻟﻪ: ﻭاﻟﺬﻱ ﻧﻔﺴﻲ ﺑﻴﺪﻩ۔

(ﺇﻥ اﻟﺴﻘﻂ): ﺑﺎﻟﻜﺴﺮ ﺃﺷﻬﺮ ﻣﻦ ﺃﺧﺘﻴﻪ، ﻭﻫﻮ ﻣﻮﻟﻮﺩ ﻏﻴﺮ ﺗﺎﻡ۔

(ﺑﺴﺮﺭﻩ) : ﺑﻔﺘﺤﺘﻴﻦ ﻭﻛﺴﺮﻫﺎ ﻟﻐﺔ ﻓﻲ اﻟﺴﻴﻦ، ﻭﻫﻮ ﻣﺎ ﺗﻘﻄﻌﻪ اﻟﻘﺎﺑﻠﺔ ﻣﻦ اﻟﺴﺮﺓ ﻋﻠﻰ ﻣﺎ ﻓﻲ اﻟﻘﺎﻣﻮﺱ، ﻭﻓﻲ اﻟﻨﻬﺎﻳﺔ: ﻣﺎ ﻳﺒﻘﻰ ﺑﻌﺪ اﻟﻘﻄﻊ اﻩـ. ﻭاﻷﻭﻝ ﺃﻇﻬﺮ ; ﻷﻥ اﻟﻠﻪ ﺗﻌﺎﻟﻰ ﻳﻌﻴﺪ ﺟﻤﻴﻊ ﺃﺟﺰاء اﻟﻤﻴﺖ ﻛﺎﻷﻇﺎﻓﺮ اﻟﻤﻘﻠﻮﻋﺔ، ﻭاﻷﺷﻌﺎﺭ اﻟﻤﻘﻄﻮﻋﺔ ﻭاﻟﻘﻠﻔﺔ، ﻭﻏﻴﺮﻫا۔

(ج : 3، ص : 1252، ط :دار احیاء التراث العربی)

وفیہ ایضا :

1757 - ﻭﻋﻦ ﻋﻠﻲ ﻗﺎﻝ: ﻗﺎﻝ ﺭﺳﻮﻝ اﻟﻠﻪ ﺻﻠﻰ اﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ:

«ﺇﻥ اﻟﺴﻘﻂ ﻟﻴﺮاﻏﻢ ﺭﺑﻪ ﺇﺫا ﺃﺩﺧﻞ ﺃﺑﻮﻳﻪ اﻟﻨﺎﺭ، ﻓﻘﺎﻝ: ﺃﻳﻬﺎ اﻟﺴﻘﻂ اﻟﻤﺮاﻏﻢ ﺭﺑﻪ ﺃﺩﺧﻞ ﺃﺑﻮﻳﻚ اﻟﺠﻨﺔ، ﻓﻴﺠﺮﻫﻤﺎ ﺑﺴﺮﺭﻩ ﺣﺘﻰ ﻳﺪﺧﻠﻬﻤﺎ اﻟﺠﻨﺔ» ، ﺭﻭاﻩ اﺑﻦ ﻣﺎﺟﻪ.

(ﺇﻥ اﻟﺴﻘﻂ) : ﺑﺎﻟﻜﺴﺮ ﺃﻱ: اﻟﻮﻟﺪ اﻟﺴﺎﻗﻂ ﻗﺒﻞ ﺳﺘﺔ ﺃﺷﻬﺮ۔

(ﺃﺑﻮﻳﻪ اﻟﻨﺎﺭ، ﻓﻴﻘﺎﻝ: ﺃﻳﻬﺎ اﻟﺴﻘﻂ اﻟﻤﺮاﻏﻢ ﺭﺑﻪ ﺃﺩﺧﻞ ﺃﺑﻮﻳﻚ): ﺃﻱ: ﻛﻦ ﺳﺒﺒﺎ ﻟﺪﺧﻮﻝ ﺃﺑﻮﻳﻚ۔

ج : 3، ص : 1253، ط : دار احیاء التراث العربی)

کذا فی بدائع الصنائع :

اﻟﻤﺮﺃﺓ ﺗﺼﻴﺮ ﻓﺮاﺷﺎ ﺑﺄﺣﺪ ﺃﻣﺮﻳﻦ ﺃﺣﺪﻫﻤﺎ ﻋﻘﺪ اﻟﻨﻜﺎﺡ ﻭاﻟﺜﺎﻧﻲ ﻣﻠﻚ اﻟﻴﻤﻴﻦ ﺇﻻ ﺃﻥ ﻋﻘﺪ اﻟﻨﻜﺎﺡ ﻳﻮﺟﺐ اﻟﻔﺮاﺵ ﺑﻨﻔﺴﻪ ﻟﻜﻮﻧﻪ ﻋﻘﺪا ﻣﻮﺿﻮﻋﺎ ﻟﺤﺼﻮﻝ اﻟﻮﻟﺪ ﺷﺮﻋﺎ ﻗﺎﻝ اﻟﻨﺒﻲ - ﻋﻠﻴﻪ اﻟﺼﻼﺓ ﻭاﻟﺴﻼﻡ - «ﺗﻨﺎﻛﺤﻮا ﺗﻮاﻟﺪﻭا ﺗﻜﺜﺮﻭا ﻓﺈﻧﻲ ﺃﺑﺎﻫﻲ ﺑﻜﻢ اﻷﻣﻢ ﻳﻮﻡ اﻟﻘﻴﺎﻣﺔ ﻭﻟﻮ ﺑاﻟﺴﻘﻂ

(ج : 6، ص : 243، ط :دارالکتب العلمیة)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 392
kia zaya honay wala hamal aakhrat mai waldain ki sifarish karayga?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © AlIkhalsonline 2021.