عنوان: اغوا برائے تاوان کا حکم(106659-No)

سوال: آج کل بعض لوگ بچوں یا بڑوں کو اغوا کرلیتے ہیں، اور موبائل وغیرہ کے ذریعہ ان کے متعلقین سے بھاری رقم مانگتے ہیں، اس کے بغیر بچوں اور بڑوں کو چھوڑتے نہیں ہیں، اس بارے میں کیا حکم ہے؟

جواب: بعض لوگوں کا بچوں یا بڑوں کو اغوا کرنا اور موبائل وغیرہ کے ذریعہ ان کے متعلقین سے بھاری رقم مانگنا اور رقم وصول ہونے سے پہلے مذکورہ لوگوں کو نہ چھوڑنا سب ناجائز ہے، اور اس سے حاصل ہونے والی رقم حرام ہے، لہذا ایسے لوگوں پر حاصل کردہ رقم کو مالکان کو واپس کرنا اور اس کام سے توبہ و استغفار کرنا لازم اور ضروری ہے۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


کما فی مسند احمد:

حدثنا عبد الرزاق، حدثنا داود بن قيس، عن أبي سعيد مولى عبد الله بن عامر، قال: سمعت أبا هريرة يقول: قال رسول الله - صلي الله عليه وسلم -: "لا تحاسدوا، ولا تناجشوا، ولا تباغضوا، ولا تدابروا، ولا يبع أحدكم علي بيع أخيه، وكونوا عباد الله إخوانا، المسلم أخو المسلم، لا يظلمه ولا يخذله ولا يحقره، التقوى ها هنا، وأشار بيده إلى صدره، ثلاث مرات، حسب امرئ مسلم من الشر أن يحقر أخاه المسلم، كل المسلم على المسلم حرام، دمه، وماله، وعرضه".

(ج: 7، ص: 443، ط: دار الحدیث)

وفی الدر المختار مع رد المحتار:

والحاصل أنه إن علم أرباب الأموال وجب رده عليهم، وإلا فإن علم عين الحرام لا يحل له ويتصدق به بنية صاحبه

(ج: 5، ص: 99، ط: دار الفکر)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 230
aghwa baraye tawaan ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Miscellaneous

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.