عنوان: جنگلی طوطا پالنے کا حکم کیا ہے؟(106663-No)

سوال: میں اپنی فیملی کو چڑیا گھر لے کر گھمانے گیا تھا، وہاں جنگلی طوطے بھی تھے، جنھیں دیکھ کر میرا چھوٹا بیٹا جنگلی طوطا پالنے کی ضد کرنے لگا، لہذا میں جنگلی طوطا پالنا چاہتا ہوں، آپ سے سوال یہ ہے کہ کیا میں اپنے چھوٹے بچہ کے لئے جنگلی طوطا پال سکتا ہوں؟

جواب: جس طرح پالتو طوطا پالنا جائز ہے، اسی طرح جنگلی طوطا پالنا بھی جائز ہے، بشرطیکہ چند باتوں کا خیال رکھا جائے:

(1) ان کے پالنے میں کسی دوسرے شخص کو تکلیف نہ ہو۔

(2) ان کے ذریعے دوسروں کے مملوک پرندے پکڑنا مقصود نہ ہو۔

(3) ان کی خوراک کا انتظام کیا جائے۔

(4) ان کا پنجرہ اتنا بڑا ہو کہ اس میں ان کو اذیت نہ ہو۔

(5) ان کی تمام ضروریات کا مکمل خیال رکھا جائے۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


کما فی الشامیۃ:

قوله: يكره إمساك الحمامات إن كان يضر بالناس … وأما للاستئناس فمباح ( وأما للاستئناس فمباح ) قال في المجتبى رامزا لا بأس بحبس الطيور والدجاج في بيته ولكن يعلفها وهو خير من إرسالها في السكك اه وفي القنية رمزا حبس بلبلا في القفص وعلفها لا يجوز اه أقول لكن في فتاوى العلامة قارىء الهداية سئل هل يجوز حبس الطيور المفردة وهل يجوز عتقها وهل في ذلك ثواب وهل يجوز قتل الوطاويط لتلويثها حصر المسجد بخرئها الفاحش فأجاب يجوز حبسها للاستئناس بها وأما إعتاقها فليس فيه ثواب وقتل المؤذي منها ومن الدواب جائز اه قلت ولعل الكراهة في الحبس في القفص لأنه سجن وتعذيب دون غيره كما يؤخذ من مجموع ما ذكرنا وبه يحصل التوفيق فتأمل۔

(ج: 6، ص: ،401، ط: دار الفکر)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 363
jungli toota palnay ka hukum kia hai?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.