عنوان: غلافِ کعبہ کے دھاگوں کو نوچ کر تبرک کے طور پر رکھنے کا حکم(106896-No)

سوال: آج کل لوگ جب حج یا عمرہ کے لئے جاتے ہیں، تو غلافِ کعبہ کے کپڑے سے دھاگے نوچ نوچ کر تبرک کے طور پر اپنے پاس رکھتے رہتے ہیں، اور انہیں اپنے ساتھ وطن لے آتے ہیں، سوال یہ ہے کہ کیا لوگوں کا غلافِ کعبہ کے دھاگوں کو نوچنا اور ان کو تبرک کے طور پر اپنے پاس رکھنا درست ہے؟

جواب: واضح رہے کہ خانہ کعبہ کے غلاف سے دھاگوں کو نوچ نوچ کر نکالنا اور ان نوچے ہوئے دھاگوں کو تبرک کے طور پر رکھنا شرعا درست نہیں ہے، لہذا اس سے احتراز کرنا چاہیے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی تفسیر القرطبی:

قال العلماء: ولا ينبغي أن يؤخذ من كسوة الكعبة شي، فإنه مهدي إليها، ولا ينقص منها شي.

(ج: 2، ص: 125، ط: دار الکتب المصریۃ)

وفی النتف فی الفتاوی للسغدی:

لا يجوز ان يأخذ من كسوة الكعبة شيئا فان اخذه رده اليها۔۔الخ

(ج: 1، ص: 222، ط: دار الفرقان)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 353
ghilaaf e kaaba kay dhagon ko nooch kar tabarruk kay tour par rakhnay ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Hajj (Pilgrimage)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © AlIkhalsonline 2021.