عنوان: الٹی سعی کرنے والے کے لئے کیا حکم ہے؟(106967-No)

سوال: اگر کوئی شخص بھولے سے صفا کے بجائے مروہ سے سعی کرنا شروع کرے اور الٹی سعی کرے، تو اس کے لئے کیا حکم ہے؟

جواب: صفا سے سعی شروع کرنا واجب ہے اور مروہ پر سعی ختم کرنا واجب ہے، لہذا اگر کوئی شخص مروہ سے سعی کی ابتداء کرے، تو اس کا پہلا مروہ سے صفا کی طرف والے چکر کا اعتبار نہیں ہوگا اور باقی چھ چکر معتبر ہوں اور وہ شخص آخر میں ایک اور چکر لگائے گا، تاکہ سات چکر مکمل ہوجائیں، البتہ اگر کوئی شخص آخری چکر نہ لگائے، تو اس صورت میں اس پر صدقہ یعنی نصف صاع (پونے دو سیر) گندم یا اس کی قیمت دینا واجب ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الدر المختار مع رد المحتار:

ويجب لكل شوط منه ومن السعي نصف صاع

(قوله ومن السعي) ای لو ترک ثلاثۃ منہ أو اقل فعلیہ لکل شوط منہ صدقۃ الا أن یبلغ دما فیخیر بین الدم وتنقیص الصدقۃ۔۔الخ

(ج: 2، ص: 556، ط: دار الفکر)

وفی المناسک لملا علی القاری:

لو بدأ بالمروۃ وختم بالصفا یلزمہ اعادۃ شوط واحد یعنی بأن یعود من الصفا إلی المروۃ…ویکون شوطہ الاوّل ساقطۃ الاعتبار۔۔۔الخ

(ج: 1، ص: 175)

وفیہ ایضاً:

(ولوترک منہ) ای من السعی (ثلاثۃ اشواط أو اقل فعلیہ لکل شوط صدقۃ الا أن یبلغ ذلک دما فلہ الخیار بین الدم وتنقیص الصدقۃ)ای بقدر ماشاء أو مقدر بنصف صاع… الخ۔

(ج: 1، ص: 355)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 213
ulti sayi karne walay k liye kia hukum hai?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Hajj (Pilgrimage)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © AlIkhalsonline 2021.