عنوان: احرام کی حالت میں بال بیماری کی وجہ سے جھڑیں، تو کیا حکم ہے؟(106969-No)

سوال: اگر کوئی عورت احرام کی حالت میں ہو اور اس کے بال بیماری کی وجہ سے جھڑ رہے ہوں، تو کیا حکم ہے؟

جواب: اگر کوئی شخص احرام کی حالت میں اپنے بال قصداََ توڑے، کاٹے یا کٹوائے اور وہ بال چوتھائی سر کی مقدار یا اس سے زیادہ ہوں، تو اس پر دم واجب ہوتا ہے اور اگر چوتھائی سر کی مقدار سے کم ہوں، تو اس پر صدقہ واجب ہوتا ہے، البتہ اگر کسی مرد یا عورت کے بال بیماری کی وجہ سے جھڑ رہیں ہوں، تو اس صورت میں ان پر کچھ واجب نہیں ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی البحر الرائق:

وإن كان حلق أقل من ربع الرأس أو أقل من ربع اللحية يلزمه صدقة كما يلزم المحرم إذا حلق رأس غيره۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وإنما كان حلق ربع الرأس أو ربع اللحية موجبا للدم لتكامل الجناية بتكامل الارتفاق۔۔۔۔فلو أزاله بالنورة أو نتف لحيته أو احترق شعره بخبزة أو مسه بيده فسقط فهو كالحلق كما في المحيط وغيره بخلاف ما إذا تناثر شعره بالمرض أو النار فلا شيء عليه؛ لأنه ليس للزينة، وإنما هو شين كذا في المحيط أيضا

(ج: 3، ص: 9، ط: دار الكتاب الإسلامي)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 168
ihram ki halat mai baal bimari ki waja say jharain to kia hukum hai?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Hajj (Pilgrimage)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © AlIkhalsonline 2021.