عنوان: غیر رہائشی طلبائے کرام پر نفلی صدقہ کی رقم خرچ کرنے کا شرعی حکم(7170-No)

سوال: مفتی صاحب ! کیا نفلی صدقہ کے پیسوں سے مدرسہ کے غیر رہائشی بچوں کو کھانا کھلا سکتے ہیں؟

جواب: "نفلی صدقہ" کسی بھی خیر اور بھلائی کے کام میں ثواب کی نیت سے خرچ کرنے کو کہتے ہیں۔ نفلی صدقہ کی رقم جسے دی جارہی ہے، اس کا مستحق زکاة ہونا ضروری نہیں ہے، لہذا نفلی صدقہ کی رقم رہائشی وغیر رہائشی دونوں طرح کے طلباء پر خرچ کی جاسکتی ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

سنن ابن ماجہ: (بَابُ ثَوْابِ مُعَلِّمِ النَّاسِ الْخَيْر، رقم الحدیث: 242)
عن ابي هريرة ، قال: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم:" إن مما يلحق المؤمن من عمله، وحسناته بعد موته، علما علمه ونشره، وولدا صالحا تركه، ومصحفا ورثه، او مسجدا بناه، او بيتا لابن السبيل بناه، او نهرا اجراه، او صدقة اخرجها من ماله في صحته وحياته يلحقه من بعد موته".

الفقہ الاسلامی و ادلتہ: (2056/3، ط: دار الفکر)
ب صاحب الحاجة الشديدة: تستحب الصدقة على من اشتدت حاجته لقول الله تعالى: {أو مسكينا ذا متربة} [البلد: 90/16].

الفتاوی التاتارخانیۃ: (211/4- 214)
"فالجملہ في ہذا أن جنس الصدقۃ یجوز صرفہا إلی المسلم … ویجوز صرف التطوع إلیہم بالاتفاق۔ وروی عن أبي یوسف: أنہ یجوز صرف الصدقات إلی الأغنیاء أذا سموا فی الوقف ، فأما الصدقۃ علی وجہ الصلۃ والتطوع فلا بأس بہ۔ وفي الفتاوی العتابیۃ: وکذلک یجوز النفل للغني".

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 477 Mar 28, 2021
gair rihaishi tulabaye kiram par nafli sadqa ki raqam kharch karne ka shar'ee hukum, Shariah Ruling on Spending Nafil Sadaqah Money on Non-Resident Students

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.