عنوان: کھانے پینے کی گرم اشیاء میں پھونک مار نے کا شرعی حکم(7187-No)

سوال: مفتی صاحب! کھانے پینے کی گرم چیزوں میں پھونک مارنا صحیح ہے یا نہیں؟ شریعت کی روشنی میں وضاحت فرمائیں۔ جزاک اللہ خیرا

جواب: واضح رہے کہ گرم کھانے یا گرم مشروب کو ٹھنڈا کرنے کیلئے آواز سے پھونک مارنا خلافِ ادب ہے، حدیث میں اس سے ممانعت وارد ہے، اس سے بچنا چاہیے، البتہ ضرورت کے وقت بغیر آواز کے پھونک مارنے میں کوئی حرج نہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

سنن الترمذی: (باب ما جاء فی کراھیۃ النفخ فی الشراب، رقم الحدیث: 1888)
حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي عُمَرَ، قَالَ: حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ، عَنْ عَبْدِ الكَرِيمِ الجَزَرِيِّ، عَنْ عِكْرِمَةَ، عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَهَى أَنْ يُتَنَفَّسَ فِي الإِنَاءِ أَوْ يُنْفَخَ فِيهِ.
هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ صَحِيحٌ.

رد المحتار: (340/6، ط: دار الکفر)
ولا يأكل الطعام حارا ولا يشمه. وعن الثاني أنه لا يكره النفخ في الطعام إلا بما له صوت نحو أف وهو محمل النهي.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 959
khanay pinay ki garam ashiya mai phonk marne ka shar'ee hukum, Shariah ruling of blowing on hot food items

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Halaal & Haram In Eatables

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2023.