عنوان: زکوۃ کی مد میں راشن دلوانا، نیز زکوۃ کی ادائیگی میں رقم دینا افضل ہے(107210-No)

سوال: مفتی صاحب ! السلام علیکم ، میرا سوال یہ ہے کہ کیا زکوٰۃ کے پیسوں کا راشن لے کر مختلف مستحق لوگوں کو دے سکتے ہیں؟ نیز راشن اور پیسوں میں سے کیا چیز دینا افضل ہے؟

جواب: واضح رہے کہ مستحق زکوٰۃ کو کوئی چیز مالک بنا کر دیدی جائے، تو اس سے زکوٰۃ ادا ہو جاتی ہے، لہذا مستحق زکوٰۃ کو راشن یا ضروریات کا سامان خرید کر اسے مالک بنا کر دینے سے زکوٰۃ ادا ہو جائے گی۔

زکوۃ کی ادائیگی میں نقد رقم دینا زیادہ بہتر ہے، تاکہ ضرورت مند اپنی مرضی سے ضرورت کی چیزیں خرید سکیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

لما فی الشامیۃ:

"ھی تملیک خرج الإباحۃ فلو أطعم یتیما ناویا الزکوٰۃ لایجزیہ إلا إذا دفع إلیہ المطعوم کمالو کساہ أی کما یجزئہ لوکساہ الخ۔

(کتاب الزکاۃ، ۲ /۲۵۷، ط: کراچی)


وفی التاتارخانیۃ:

"فالکسوۃ لاشک أنہ یجوز لو جود الرکن وہو التملیک فیہا وفی الملتقط: وعلیہ الفتویٰ".

(کتاب الزکاۃ، الفصل الثامن فی من توضع فیہ الزکاۃ، ج3، ص214،رقم: 4159، زکریا)

وفی الھندیۃ:

"المال الذی تجب فیہ الزکاۃ أدی زکاتہ من خلاف جنسہ أدی قدر قیمۃ الواجب".

(کتاب الزکاۃ، الباب الثالث فی زکاۃ الذہب، الفصل الثانی فی العروض، رشیدیہ)

کذا فی الجوهرة النيرة:

فإن قلت فما الأفضل إخراج القيمة أو عين المنصوص قلت ذكر في الفتاوى أن أداء القيمة أفضل وعليه الفتوى لأنه أدفع لحاجة الفقير وقيل المنصوص أفضل لأنه أبعد من الخلاف وأما الخبز فيعتبر فيه القيمة وهو الصحيح۔

(ج2، ص9)


کذا فی المبسوط للسرخسي:

وكان الفقيه أبو جعفر رحمه الله تعالى يقول : أداء القيمة أفضل ؛ لأنه أقرب إلى منفعة الفقير فإنه يشتري به للحال ما يحتاج إليه۔

(ج4، ص141)

واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Views: 62

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com