عنوان: گھر بنانے کیلئے بینک سے معاملہ کرنا(107217-No)

سوال: السلام علیکم، میرا سوال یہ ہے کہ گورنمنٹ کی نئی پالیسی کے تحت سودی بینک اور اسلامی بینک گھر کیلئے ادھار رقم دے رہا ہے، آیا یہ رقم ہم لے سکتے ہیں؟

جواب: گھر بنانے کیلئے سودی بینکوں سے ادھار رقم لینا سود پر مبنی ہونے کی وجہ سے ناجائز اور حرام ہے٬ اس سے اجتناب لازم ہے٬ البتہ جو غیر سودی بینک، مستند علماء کرام کی زیر نگرانی شرعی اصولوں کے مطابق کام کر رہے ہوں٬ ان سے گھر بنانے کے سلسلے میں شرکت متناقصہ (Diminishing Musharakah) یا کسی اور جائز طریقہ تمویل (islamic mode of finance)کے تحت معاملہ کیا جاسکتا ہے۔

دلائل:

..........................



قال اﷲ تعالیٰ:

" أحل اﷲ البیع وحرم الربوا"

[سورۃ البقرۃ: ۲۷۵]

وفی السنن الکبری للبیہقي:

"عن فضالۃ بن عبید صاحب النبي صلی اﷲ علیہ وسلم أنہ قال: کل قرض جر منفعۃ فہو وجہ من وجوہ الربا"

(باب کل قرض جر منفعۃ فہو ربا، رقم: ۱۱۰۹۲)

واللہ تعالی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 265
ghar banany kay liye bank say muamla karna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Loan, Interest, Gambling & Insurance

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.