عنوان: توہینِ رسالت کرنے والے مسلمان کا حکم(107251-No)

سوال: اگر کوئی مسلمان حضور اکرم ﷺ کو معاذ اللہ برا بھلا کہے اور توہین رسالت کرتے ہوئے یوں کہے کہ آپ ﷺ نے پوری شریعت بیان نہیں کی ہے، تو ایسے شخص کے بارے میں کیا حکم ہے؟

جواب: صورت مسئولہ میں مذکورہ شخص حضور اکرم ﷺ کو سب و شتم کرنے اور آپ ﷺ کی رسالت کی توہین کرنے کی وجہ سے دائرہ اسلام سے خارج اور مرتد ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الدر المختار مع رد المحتار:

والکافر بسب نبی من الانبیاء فانہ یقتل حدا ولاتقبل توبتہ مطلقا…لکن صرح فی آخر الشفاء بان حکمہ کالمرتد ومفادہ قبول التوبۃ کما لایخفی۔

ان المشہور عن مالک واحمد انہ لایستتاب ولایسقط القتل عنہ وھوقول اللیث بن سعد وذکر القاضی عیاض انہ المشھور من قول السلف وجمھور العلماء وھواحد الوجھین لاصحاب الشافعی۔۔۔وحکی عن مالک واحمد انہ تقبل توبتہ وھو قول ابی حنیفۃ واصحابہ …… فھذا صریح کلام القاضی عیاض فی الشفاء والسبکی وابن تیمیۃ وائمۃ مذھبہ علی ان مذھب الحنفیۃ قبول التوبۃ بلاحکایۃ قول اخرعنھم۔

(ج: 4، ص: 231، ط: دار الفکر)

وفی الھندیۃ:

سئل عمن ینسب الی الانبیاء الفواحش کعزمھم علی الزنی ونحوہ الذی یقولہ الحشویۃ فی یوسف علیہ السلام قال یکفر لانہ شتم لھم واستخفاف بھم قال ابوذر من قال ان کل معصیۃ کفر و قال مع ذلک ان الانبیاء علیھم السلام عصوا فکافر لانہ شاتم۔

(ج: 2، ص: 263، ط: دار الفکر)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 166

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com