عنوان: کیا حدیث "لہدم الکعبۃ حجراً حجراً أھون من قتل المسلم" صحیح ہے؟(107331-No)

سوال: ایک حدیث ہے "لہدم الکعبۃ حجراً حجراً أھون من قتل المسلم" یعنی کعبہ کی اینٹ سے اینٹ بجانا کسی مسلمان کا خون بہانے سے کم گناہ ہے، سوال یہ ہے کہ کیا یہ حدیث صحیح سند کے ساتھ منقول ہے؟

جواب: صورت مسئولہ میں مذکورہ حدیث لفظوں کے اعتبار سے ضعیف ہے، البتہ معنوں کے اعتبار سے صحیح ہے۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


کما فی المقاصد الحسنۃ:

لھدم الکعبۃ حجراحجرا اھون من قتل المسلم لکن لم اقف علیہ بھذا اللفظ ولکن فی معناہ ما عند الطبرانی فی الصغیر عن انسؓ رفعہ : من آذی مسلما بغیر حق فکانما ھدم بیت ﷲ ونحوہ غیر واحد من الصحابۃ۔

(ص: 344)

وفی الموضوعات الکبیر:

لھدم الکعبۃ حجر احجرا اھون من قتل المسلم قال السخاوی لم اقف بھذا اللفظ ولکن فی معناہ ماعند الطبرانی فی الصغیر عن انس رضی ﷲ عنہ رفعہ من اذی مسلم بغیر حق فکانما ھدم بیت ﷲ۔

(ص: 98)

کذا فی نجم الفتاوی:

(ج: 1، ص: 408)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 302
kia hadees "لہدم الکعبۃ حجراً حجراً أھون من قتل المسلم"sahi hai?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Interpretation and research of Ahadees

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.