عنوان: کیا قرآن سے فال نکالنا درست ہے؟(107481-No)

سوال: میری ایک خالہ ہیں، جو ہر کام کرنے سے پہلے قرآن پاک سے فال نکالتی ہیں اور اس کے بغیر کام نہیں کرتیں ہیں، کیا قرآن سے فال نکالنا درست ہے؟

جواب: واضح رہے کہ قرآن مجید حلال و حرام کو بتانے کے لئے اور ضابطہ حیات کے طور پر نازل کیا گیا ہے، لہذا اسے فال نکالنے کے لیے استعمال کرنا صحیح نہیں ہے، کیونکہ اسلام میں قرآن مجید سے فال نکالنے کی کوئی اصل موجود نہیں ہے، نیز بالفرض اگر اس سے کوئی فال نکالا گیا اور وہ غلط ثابت ہوا، تو اس صورت میں قرآن مجید سے بد گمانی پیدا ہوگی اور اس غلط بات کو قرآن کی طرف منسوب کیا جائے گا، جوکہ کفر کا سبب ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی القرآن الکریم:

إِنَّ هٰذَا الْقُرْآنَ يَهْدِيْ لِلَّتِيْ هِيَ أَقْوَمُ وَيُبَشِّرُ الْمُؤْمِنِيْنَ الَّذِيْنَ يَعْمَلُوْنَ الصّٰلِحٰتِ أَنَّ لَهُمْ أَجْرًا كَبِيْرًا۔

(الاسراء: ۹)

وفی مقام آخر:

وَيُحِلُّ لَهُمُ الطَّيِّبَاتِ وَيُحَرِّمُ عَلَيْهِمُ الْخَبَائِثَ۔

(الاعراف: ۱۵۷)

وفی المشکوۃ:

عن ابن عباس قال کان رسول اﷲﷺ یتفاول ولایتطیر وکان یحب الاسم الحسن۔

(ص: 392)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 257

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com