عنوان: کیا انبیاء علیہم السلام کو احتلام ہوتا تھا؟(107518-No)

سوال: مجھے یہ رہنمائی فرمادیں کہ کیا انبیاء علیہم السلام کو احتلام ہوتا تھا؟

جواب: واضح رہے کہ انبیاء علیہم السلام کو احتلام نہیں ہوتا تھا، کیونکہ احتلام عام طور پر شیطانی اثرات کی وجہ سے ہوتا ہے، جبکہ انبیاء علیہم السلام ہر حالت میں شیطانی اثرات سے محفوظ رکھے گئے ہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الصحیح لمسلم:

عن علقمۃ والاسود ان رجلا نزل بعائشۃ فاصبح یغسل ثوبہ فقالت عائشۃ انماکان یجزئک ان رأیتہ ان تغسل مکانہ فان لم ترہ نضجت حولہ لقد رأیتنی افرکہ من ثوب رسول اﷲﷺ فرکا فیصلی فیہ۔

(ج: 1، ص: 238، رقم الحدیث: 288)

وفی شرح النووی علی الصحیح لمسلم:

وتعلق المحتجون بھذا الحدیث بان قالوا الاحتلام مستحیل فی حق النبیﷺ لانہ من تلاعب الشیطان بالنائم فلایکون المنی الذی علی ثوبہﷺ الامن الجماع ……جواب بعضھم انہ یمتنع استحالۃ الاحتلام منہﷺ وکونھا من تلاعب الشیطان بل الاحتلام منہ جائزﷺ ولیس ھو من تلاعب الشیطان بل ھو فیض زیادۃ المنی یخرج فی وقت۔

(ج: 3، ص: 198، ط: دار احیاء التراث العربی)

وفی الشامیۃ:

وقد یؤید ماصححہ فی الخانیۃ بماصح عن عائشۃ رضی اﷲ عنھا کنت احک المنی من ثوب رسول اﷲﷺ وھو یصلی ولاخفا انہ کان من جماع لان الانبیاء لاتحتلم۔

(ج: 1، ص: 313، ط: دار الفکر)

کذا فی نجم الفتاوی:

(ج: 1، ص: 452)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 109

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com