عنوان: بوتل کو منہ لگا کر پانی پینے کا حکم(107570-No)

سوال: مفتی صاحب ! گلاس، بوتل یا اور کسی برتن میں منہ لگا کر پانی پینا ضروری ہے یا بغیر منہ لگائے بھی پی سکتے ہیں؟

جواب: پانی پینے کے آداب میں سے یہ ہے کہ پانی گلاس، کٹورے وغیرہ میں نکال کر پیا جائے، بوتل سے منہ لگا کر نہ پیا جائے، اس طرح پانی پینے سے رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے منع فرمایا ہے، کیونکہ اس صورت میں دوسروں کے لیے اسی بوتل سے پانی پینا کراہیت کا باعث ہوتا ہے، اسی لئے بوتل، مشکیزہ وغیرہ سے منہ لگاکر پانی پینے کو فقہائے کرام نے مکروہ کہا ہے۔

اگر بوتل اجتماعی طور پر پانی پینے کے لئے نہ ہو، تو ایسی صورت میں منہ لگا کر بوتل سے پانی پینے میں کراہیت نہیں ہوگی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کذا فی المستدرك علي الصحيحين للحاكم:

«عن عائشة رضي الله عنها : ان النبي صلي الله عليه وسلم "نهي أن يّشرب من في السقاء لأن ذلك ينته"، هذا حديث صحيح الإسناد ولم يخرجاه

(شاهده حديث هشام بن عروة عن ابيه ١٥٦/٤ ط: دار الكتب العلمية)

کذا فی فتح الباري لإبن حجر:

« وقال النووي: اتفقوا علي ان النهي هنا للتنزيه لا للتحريم».

( قوله: باب الشرب من فم السقاء ط: دار المعرفة)

کذا فی عمدة القاري شرح صحيح البخاري للعيني:

فروي إبن ابي شيبة فب (المصنف) عن ابن عباس انه كان لا يري بأساً بالشرب من في الادواة. وعن سعي بن جبير قال: رأيت ابن عمر رضي الله عنهما يشرب من في الدواة. و عن نافع ان ابن عمر كان يشرب من في السقاء. و عن عباد بن منصور قال: رأيت سالم بن عبد الله ين عمر يشرب من في الادواة.

(ج:21، ص:199، باب الشرب من فم السقاء، ط: احياء التراث العربي)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

Print Full Screen Views: 553
bottle say moo laga kar pani pinay ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Halaal & Haram In Eatables

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.