عنوان: جادو کرنے والے شخص کے بارے میں شریعت کا حکم(7719-No)

سوال: جو شخص لوگوں پر جادو کرتا ہے اور انہیں نقصان پہنچاتا ہے، ایسے شخص کے بارے میں شریعت کا کیا حکم ہے؟

جواب: اگر جادو کرنے والا شخص کفریہ عقائد رکھتا ہو یا کفریہ اعمال میں مبتلا ہو، تو ایسا شخص کافر ہوجائے گا اور اگر کفریہ عقائد نہ رکھتا ہو یا کفریہ اعمال میں مبتلا نہ ہو، تو یہ شخص کافر نہیں ہوگا، البتہ فاسق اور گناہ گار ضرور ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

شرح الفقہ الاکبر: (ص: 145)
قال الشیخ ابومنصور الماتریدی القول بان السحرکفر علی الاطلاق خطأ بل یجب البحث عنہ فان کان ذلک رد مالزمہ فی شرط الایمان فھو کفر والا فلا۔ فلوفعل مافیہ ھلاک انسان اومرضہ اوتفریق بینہ وبین امرأتہ وھو غیر منکر بشیٔ من شرائط الایمان لایکفر لکنہ یکون فاسقا ساعیا فی الارض بالفساد فیقتل الساحر والساحرۃ لان علۃ القتل السعی فی الارض بالفساد۔

رد المحتار: (240/4، ط: دار الفکر)
السحرحرام بلا خلاف بین اھل العلم واعتقاد اباحتہ کفر …… وحاصلہ انہ اختار انہ لایکفر الااذا اعتقد مکفرا، وبہ جز م فی النہر وتبعہ الشارح وانہ یقتل مطلقا ان عرف تعاطیہ لہ۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 249
jaado karne walay shakhs kay baray mai shariat ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.