عنوان: زمیندار کا مقررہ حصے سے زائد کا مطالبہ کرنا(107816-No)

سوال: السلام علیکم، محترم مفتی صاحب ! زید نے اپنی زمین عمرو کو بطور شراکت کے دیدی، اب زید اپنی مقررہ شراکت والی رقم کے علاوہ بحیثیت مالک زمین ہونے کے علاقائی عرف کے مطابق ساتواں حصہ ( ہفتک) کا دعویدار اور حق دار ہوسکتا ہے یا نہیں ؟ یعنی شریک ہونے کے ساتھ ساتھ اپنی زمین کی وجہ سے دوسرے شریک سے ساتوں حصہ لینا کیسا ہے؟

جواب: مزارعت کی صحت کے لئے ضروری ہے کہ زمیندار اور کسان کے حصے پہلے سے متعین کردیے جائیں، اور فصل تیار ہونے کے بعد معاہدے کے مطابق تقسیم کی جائے، فریقین میں سے کسی ایک کا مقررہ حصے سے زائد کا مطالبہ کرنا درست نہیں۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


قال صاحب الھدایہ:

ثم المزارعۃ لصحتھا علی قول من یجیزھا شروط: احدھا کون الارض صالحۃ للزرع۔۔۔۔۔۔۔الخامس بیان نصیب من لابذر من قبلہ، لانہ یستحقہ عوضا بالشرط، فلابد ان یکون معلوما، و مالا یعلم لا یستحق شرطا بالعقد۔۔۔

(ج: 4، ص: 425، ط: مکتبہ رحمانیہ)

و قال ایضا:

و إذا صحت المزارعۃ فالخارج علی الشرط لصحت التزام، وان لم تخرج الارض شیئا فلا شیء للعامل۔

(ج :4، ص: 426، ط: مکتبہ رحمانیہ)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 151
zameendar ka muqarra hissay say zaid mutalba karna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Business & Financial

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.