عنوان: والدہ کی طرف سے بغیر اجازت زکوة ادا کرنے کا حکم(107860-No)

سوال: میرے بڑے بھائی نے والدہ کو نصاب سے زیادہ رقم دی کہ جہاں چاہیں خرچ کردیں، جو کہیں بھی خرچ نہ ہوئی، کچھ عرصے بعد والدہ نے بھائی کو وہ رقم واپس کر دی، میں اپنے مال کی زکوٰۃ دیتے وقت اضافی ہی دیا کرتا رہا ہوں، اس گمان کے ساتھ کہ اس مال کی بھی زکوٰۃ ادا ہو جائے، مگر کبھی والدہ کو یہ بات باور نہیں کروائی، کیا اس رقم کی زکوٰۃ ادا ہوگئی؟

جواب: واضح رہے کہ اگر کوئی شخص دوسرے کی طرف سے اس کی اجازت اور حکم کے بغیر زکوٰة ادا کرے، تو زكوة ادا نہیں ہوتی ہے۔

صورتِ مسئولہ میں چونکہ آپ نے اپنے مال سے اپنی والدہ کی اجازت اور حکم کے بغیر ان کی زکوٰۃ ادا کی ہے، لہذا مذکورہ مال کی زکوٰۃ ادا نہیں ہوئی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

لمافی البحر الرائق:

ﻭﻟﻮ ﺃﺩﻯ ﺯﻛﺎﺓ ﻏﻴﺮﻩ ﺑﻐﻴﺮ ﺃﻣﺮﻩ ﻓﺒﻠﻐﻪ ﻓﺄﺟﺎﺯ ﻟﻢ ﻳﺠﺰ؛ ﻷﻧﻬﺎ ﻭﺟﺪﺕ ﻧﻔﺎﺫا ﻋﻠﻰ اﻟﻤﺘﺼﺪﻕ؛ ﻷﻧﻬﺎ ﻣﻠﻜﻪ، ﻭﻟﻢ ﻳﺼﺮ ﻧﺎﺋﺒﺎ ﻋﻦ ﻏﻴﺮﻩ ﻓﻨﻔﺬﺕ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﻟﻮ ﺗﺼﺪﻕ ﻋﻨﻪ ﺑﺄﻣﺮﻩ ﺟﺎﺯ ﻭﻳﺮﺟﻊ ﺑﻤﺎ ﺩﻓﻊ ﻋﻨﺪ ﺃﺑﻲ ﻳﻮﺳﻒ، ﻭﺇﻥ ﻟﻢ ﻳﺸﺘﺮﻁ اﻟﺮﺟﻮﻉ ﻛﺎﻷﻣﺮ ﺑﻘﻀﺎء اﻟﺪﻳﻦ ﻭﻋﻨﺪ ﻣﺤﻤﺪ ﻻ ﺭﺟﻮﻉ ﻟﻪ ﺇﻻ ﺑﺎﻟﺸﺮﻁ.

(ج:2، ص:227،ط: دارالکتاب الاسلامی بیروت )

وفی الشامیة:

ﻗﺎﻝ ﻓﻲ اﻟﺘﺘﺎﺭﺧﺎﻧﻴﺔ: ﺇﻻ ﺇﺫا ﻭﺟﺪ اﻹﺫﻥ ﺃﻭ ﺃﺟﺎﺯ اﻟﻤﺎﻟﻜﺎﻥ اﻩ ﺃﻱ ﺃﺟﺎﺯ ﻗﺒﻞ اﻟﺪﻓﻊ ﺇﻟﻰ اﻟﻔﻘﻴﺮ، ﻟﻤﺎ ﻓﻲ اﻟﺒﺤﺮ: ﻟﻮ ﺃﺩﻯ ﺯﻛﺎﺓ ﻏﻴﺮﻩ ﺑﻐﻴﺮ ﺃﻣﺮﻩ ﻓﺒﻠﻐﻪ ﻓﺄﺟﺎﺯ ﻟﻢ ﻳﺠﺰ ﻷﻧﻬﺎ ﻭﺟﺪﺕ ﻧﻔﺎﺫا ﻋﻠﻰ اﻟﻤﺘﺼﺪﻕ ﻷﻧﻬﺎ ﻣﻠﻜﻪ ﻭﻟﻢ ﻳﺼﺮ ﺗﺎﺋﺒﺎ ﻋﻦ ﻏﻴﺮﻩ ﻓﻨﻔﺬﺕ ﻋﻠﻴﻪ اﻩ ﻟﻜﻦ ﻗﺪ ﻳﻘﺎﻝ: ﺗﺠﺰﻱ ﻋﻦ اﻵﻣﺮ ﻣﻄﻠﻘﺎ ﻟﺒﻘﺎء اﻹﺫﻥ ﺑاﻟﺪﻓﻊ. ﻗﺎﻝ ﻓﻲ اﻟﺒﺤﺮ: ﻭﻟﻮ ﺗﺼﺪﻕ ﻋﻨﻪ ﺑﺄﻣﺮﻩ ﺟﺎﺯ ﻭﻳﺮﺟﻊ ﺑﻤﺎ ﺩﻓﻊ ﻋﻨﺪ ﺃﺑﻲ ﻳﻮﺳﻒ. ﻭﻋﻨﺪ ﻣﺤﻤﺪ ﻻ ﻳﺮﺟﻊ ﺇﻻ ﺑﺸﺮﻁ اﻟﺮﺟﻮﻉ۔

(ج:2،ص:269،ط: دارالفکر بیروت۔)

کذا فی البدائع الصنائع في ترتيب الشرائع:

"ولو تصدق عن غيره بغير أمره فإن تصدق بمال نفسه جازت الصدقة عن نفسه ولاتجوز عن غيره وإن أجازه ورضي به أما عدم الجواز عن غيره فلعدم التمليك منه إذ لا ملك له في المؤدى ولايملكه بالإجازة فلاتقع الصدقة عنه وتقع عن المتصدق؛ لأن التصدق وجد نفاذًا عليه، وإن تصدق بمال المتصدق عنه وقف على إجازته فإن أجاز والمال قائم جاز عن الزكاة وإن كان المال هالكًا جاز عن التطوع ولم يجز عن الزكاة؛ لأنه لما تصدق عنه بغير أمره وهلك المال صار بدله دينا في ذمته فلو جاز ذلك عن الزكاة كان أداء الدين عن الغير وأنه لايجوز

(ج:2، ص: 41)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

Print Full Screen Views: 182
walida ki taraf say bagair ijazat zakat ada karne ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.