عنوان: عورت کی ملکیت میں تین تولہ سونا، چار تولہ چاندی اور جہیز میں ملنے والا سامان ہو تو قربانی کا حکم(107922-No)

سوال: السلام علیکم، ایک ساتھی کی آٹھ مہینے پہلے شادی ہوئی ہے، اس کی اہلیہ کے ساتھ تقریباً 3 تولہ سونا ہے اور تین سے چار تولے تک چاندی ہے، جبکہ باقی گھر کے سامان اور برتن وغیرہ جو شادی بیاہ میں جہیز کے طور پر ساتھ آتے ہیں، تو کیا وہ قربانی کے حوالے سے صاحب نصاب شمار ہوگی یا نہیں؟

جواب: صورتِ مسئولہ میں سونا چاندی، اور ضرورت سے زائد سامان کا مجموعہ ساڑھے باون تولہ چاندی کی قیمت سے زائد ہے، لہذا مذکورہ عورت پر قربانی واجب ہے۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


لما فی لما فی الدر المختار مع الرد:

"وشرائطھا الإسلام والإقامة والیسار الذي یتعلق بہ وجوب صدقة الفطر اھ وفی الرد: قولہ: ”والیسار الخ“ : بأن ملک مائتي درھم أو عرضاً یساویھا غیر مسکنہ وثیاب اللبس أو متاع یحتاجہ إلی أن یذبح الأضحیة الخ،

(ج:9، ص:452، کتاب الأضحیة)

کذا فی الفتاوى الهندية:

"وهي واجبة على الحر المسلم المالك لمقدار النصاب فاضلاً عن حوائجه الأصلية، كذا في الاختيار شرح المختار، ولايعتبر فيه وصف النماء، ويتعلق بهذا النصاب وجوب الأضحية، ووجوب نفقة الأقارب، هكذا في فتاوى قاضي خان".

(ج:1، ص:191)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 242
aourat ki milkiat mai teen tola soona chaar tola chandi or jahez mai milnay wala saman ho to qurbani ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Qurbani & Aqeeqa

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.