عنوان: دوسروں سے مانگنا کب جائز ہے؟(107933-No)

سوال: مفتی صاحب ! میرا ایک دوست بے روزگار ہے، ملازمت مل نہیں رہی ہے اور نوبت فاقوں تک پہنچ گئی ہے، کیا اس کے لیے اپنی حاجت کسی کے سامنے رکھنا جائز ہے؟

جواب: واضح ہو کہ اگر کسی کے فاقوں کی حالت یہاں تک پہنچ جائے کہ اگر کسی سے سوال نہ کیا جائے، تو جان جانے کا اندیشہ ہو، تو ایسی صورت میں بقدرِ ضرورت مانگنا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کذا فی الدر مع الرد:

(ﻭﻻ) ﻳﺤﻞ ﺃﻥ (ﻳﺴﺄﻝ) ﻣﻦ اﻟﻘﻮﺕ (ﻣﻦ ﻟﻪ ﻗﻮﺕ ﻳﻮﻣﻪ) ﺑﺎﻟﻔﻌﻞ ﺃﻭ ﺑﺎﻟﻘﻮﺓ ﻛﺎﻟﺼﺤﻴﺢ اﻟﻤﻜﺘﺴﺐ ﻭﻳﺄﺛﻢ ﻣﻌﻄﻴﻪ ﺇﻥ ﻋﻠﻢ ﺑﺤﺎﻟﻪ ﻹﻋﺎﻧﺘﻪ ﻋﻠﻰ اﻟﻤﺤﺮﻡ.

(ﻗﻮﻟﻪ: ﻭﻻ ﻳﺤﻞ ﺃﻥ ﻳﺴﺄﻝ ﺇﻟﺦ) ﻗﻴﺪ ﺑﺎﻟﺴﺆاﻝ؛ ﻷﻥ اﻷﺧﺬ ﺑﺪﻭﻧﻪ ﻻ ﻳﺤﺮﻡ ﺑﺤﺮ، ﻭﻗﻴﺪ ﺑﻘﻮﻟﻪ ﺷﻴﺌﺎ ﻣﻦ اﻟﻘﻮﺕ؛ ﻷﻥ ﻟﻪ ﺳﺆاﻝ ﻣﺎ ﻫﻮ ﻣﺤﺘﺎﺝ ﺇﻟﻴﻪ ﻏﻴﺮ اﻟﻘﻮﺕ ﻛﺜﻮﺏ.

(ج3، ص355/354، دارالفکر، بیروت)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

Print Full Screen Views: 174
doosron say maangna kab jaiz hai?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.