عنوان: دوسروں سے مانگنا کب جائز ہے؟(7933-No)

سوال: مفتی صاحب ! میرا ایک دوست بے روزگار ہے، ملازمت مل نہیں رہی ہے اور نوبت فاقوں تک پہنچ گئی ہے، کیا اس کے لیے اپنی حاجت کسی کے سامنے رکھنا جائز ہے؟

جواب: واضح ہو کہ اگر کسی کے فاقوں کی حالت یہاں تک پہنچ جائے کہ اگر کسی سے سوال نہ کیا جائے، تو جان جانے کا اندیشہ ہو، تو ایسی صورت میں بقدرِ ضرورت مانگنا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار مع رد المحتار: (354/3، ط: دار الفکر)
(ولا) يحل أن (يسأل) من القوت (من له قوت يومه) بالفعل أو بالقوةكالصحيح المكتسب ويأثم معطيه إن علم بحاله لإعانته على المحرم.
(قوله: ولا يحل أن يسأل إلخ) قيد بالسؤال؛ لأن الأخذ بدونه لا يحرم بحر، وقيد بقوله شيئا من القوت؛ لأن له سؤال ما هو محتاج إليه غير القوت كثوب شرنبلالية.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 609 Jul 06, 2021
doosron say maangna kab jaiz hai?, When is it permissible to ask others?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.