عنوان: اذان ختم ہونے کے بعد اذان کا جواب دینے کا حکم(108004-No)

سوال: اگر اذان ختم ہوجائے، تو کیا اذان ختم ہونے کے بعد اذان کا جواب دے سکتے ہیں؟

جواب: اذان کے ساتھ ساتھ اذان کا جواب دینا مستحب ہے، البتہ اگر کوئی شخص اذان کے ساتھ اذان کا جواب نہ دے سکے اور اذان ختم ہوئے زیادہ وقت نہ گزرا ہو، تو اذان کے بعد جواب دے دے اور اگر زیادہ وقت گزر چکا ہو، تو اس صورت میں اذان کا جواب دینا مستحب نہ ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الدر المختار مع رد المحتار:

ولو لم یجبہ حتی فرغ لم أرہ وینبغی تدارکہ ان قصر الفصل۔

فلوسکت حتی فرغ کل الاذان ثم اجاب قبل فاصل طویل کما فی اصل سنۃ الاجابۃ کما ھو ظاھر۔

(ج: 1، ص: 398، ط: دار الفکر)

وفی حاشیۃ الطحطاوی علی الدر:

قال فی النھر لم أرہ ثم اذا لم یجب حتی فرغ من تدارکہ ان قصر الفصل۔

(ج: 1، ص: 201)

کذا فی نجم الفتاوی:

(ج:2،ص:267)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Views: 69

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Salath (Prayer)

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com