عنوان: ادھار پر فروخت کی گئی گاڑی کو آدھی قیمت وصول ہونے کے بعد واپس دوبارہ خریدنے کا حکم(108169-No)

سوال: السلام عليكم، زید نے عمر سے ایک گاڑی خریدی اور اب تک صرف آدھی قیمت ادا کی، اب زید عمر کو وہی گاڑی بیچنا چاہتا ہے۔ کیا ایسا کرنا جائز ہے، جبکہ گاڑھی کی پوری رقم ادا نہیں کی ہے؟

جواب: واضح رہے کہ ادھار پر فروخت کی گئی چیز کو ساری قیمت وصول ہونے سے پہلے٬ دوبارہ واپس خریدنا (چاہے کم قیمت پر ہو یا زیادہ پر) جائز نہیں ہے٬ کیونکہ اس طریقہ کار میں عموما خرید و فروخت مقصود نہیں ہوتی ہے٬ بلکہ قرض لینا مقصود ہوتا ہے اور خرید و فروخت کے معاملے کو سود کے لین دین کا حیلہ بنایا جاتا ہے٬ جس کی وجہ سے یہ صورت جائز نہیں ہے۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


القرآن الکریم:(سورۃالبقرۃ،الایۃ:275)
أحل اﷲ البیع وحرم الربوا

الدرالمختارمع الرد:(73/5،ط:دارالفکر،بیروت)
(و) فسد (شراء ما باع بنفسه أو بوكيله) من الذي اشتراه ولو حكما كوارثه (بالأقل) من قدر الثمن الأول (قبل نقد) كل (الثمن) الأول. صورته: باع شيئا بعشرة ولم يقبض الثمن ثم شراه بخمسة لم يجز وإن رخص السعر للربا… أي لو باع شيئا وقبضه المشتري ولم يقبض البائع الثمن فاشتراه بأقل من الثمن الأول لا يجوز زيلعي: أي سواء كان الثمن الأول حالا أو مؤجلا۔

بدائع الصنائع:(198/5،ط:دارالکتب العلمیۃ)
(ومنها) الخلو من شبهة الربا لأن الشبهة ملحقة بالحقيقة في باب الحرمات احتياطا… وعلى هذا يخرج ما إذا باع رجل شيئا نقدا أو نسيئة، وقبضه المشتري ولم ينقد ثمنه - أنه لا يجوز لبائعه أن يشتريه من مشتريه بأقل من ثمنه الذي باعه منه عندنا۔

تبویب الفتاوی جامعہ دارالعلوم کراچی:رقم الفتوی:2145/6

و اللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 127
udhar par farookht ki gayi gaari ko aadhi qeemat wusool honay kay baad wapis dobara khareednay ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Business & Financial

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.