عنوان: دکاندار کا گاہک کے موبائل میں انٹرنیٹ پیکیج لگا کر دینے کے عوض دس روپے اضافی لینے کا شرعی حکم(108171-No)

سوال: السلام علیکم، آج کل لوگ موبائل انٹرنیٹ پیکج لگا کر دینے پر 10 روپے زیادہ لیتے ہیں، مثلاً 300 کا پیکج 310 روپے لے کر لگاتے ہیں، جبکہ اس کےاصل چارجز 299 ہے۔ اس ضمن میں میرا سوال یہ ہے کہ گاہک کو بتا کر یا بنا بتائے زیادہ رقم لینا جائز ہے یا نہیں؟

جواب: گاہک کے موبائل میں انٹرنیٹ پیکیج لگا کر دینا ایک اضافی کام ہے٬ جس کے عوض گاہک کی رضامندی سے اس سے طے شدہ اضافی رقم لینا شرعا درست ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

شرح المجلۃلسلیم رستم باز:(254/1،رقم المادۃ:448،ط:اتحاد بک ڈپو،دیوبند)
"ویشترط في صحۃ الإجارۃ رضی العاقدین"

الفتاوى الهندية:(411/4،ط:دارالفکر)
"ومنها أن تكون الأجرة معلومة"

و اللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 160
dukan daar ka customer kay mobile mai internet package laga kar dene kay ewaz das ropay izafi lene ka shar'ee hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Business & Financial

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.