عنوان: نائی (saloon) کی کمائی کا شرعی حکم (108334-No)

سوال: مفتی صاحب! نائی ( Men saloon) کا کام جائز ہے یا نہیں؟

جواب: واضح رہے کہ نائی کے لیے غیر شرعی کاموں ( مثلا: داڑھی منڈانا، داڑھی میں ڈیزائن بنانا، یا ایسے بال کاٹنا، جس سے کافر اور فاسق لوگوں سے مشابہت ہوتی ہو، وغیرہ) کی اجرت لینا حلال نہیں ہے، البتہ جائز کاموں کی اجرت لینا جائز اور حلال ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کذا فی سنن ابی داؤد :

ﺣﺪﺛﻨﺎ ﺃﺣﻤﺪ ﺑﻦ ﺣﻨﺒﻞ، ﺣﺪﺛﻨﺎ ﻋﺜﻤﺎﻥ ﺑﻦ ﻋﺜﻤﺎﻥ - ﻗﺎﻝ ﺃﺣﻤﺪ: ﻛﺎﻥ ﺭﺟﻼ ﺻﺎﻟﺤﺎ - ﻗﺎﻝ: ﺃﺧﺒﺮﻧﺎ ﻋﻤﺮ ﺑﻦ ﻧﺎﻓﻊ، ﻋﻦ ﺃﺑﻴﻪ، ﻋﻦ اﺑﻦ ﻋﻤﺮ، ﻗﺎﻝ: «ﻧﻬﻰ ﺭﺳﻮﻝ اﻟﻠﻪ ﺻﻠﻰ اﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﻋﻦ اﻟﻘﺰﻉ»، ﻭاﻟﻘﺰﻉ: ﺃﻥ ﻳﺤﻠﻖ ﺭﺃﺱ اﻟﺼﺒﻲ ﻓﻴﺘﺮﻙ ﺑﻌﺾ ﺷﻌﺮﻩ۔

(کتاب الترجل،ﺑﺎﺏ ﻓﻲ اﻟﺬﺅاﺑﺔ، رقم الحدیث:4194،ج:4،ص:83،ط: المکتبۃ العصریۃ)

کذا فیہ ایضاً :

ﺣﺪﺛﻨﺎ ﻋﺒﺪ اﻟﻠﻪ ﺑﻦ ﻣﺴﻠﻤﺔ اﻟﻘﻌﻨﺒﻲ، ﻋﻦ ﻣﺎﻟﻚ، ﻋﻦ ﺃﺑﻲ ﺑﻜﺮ ﺑﻦ ﻧﺎﻓﻊ، ﻋﻦ ﺃﺑﻴﻪ، ﻋﻦ ﻋﺒﺪ اﻟﻠﻪ ﺑﻦ ﻋﻤﺮ، «ﺃﻥ ﺭﺳﻮﻝ اﻟﻠﻪ ﺻﻠﻰ اﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﺃﻣﺮ ﺑﺈﺣﻔﺎء اﻟﺸﻮاﺭﺏ، ﻭﺇﻋﻔﺎء اﻟﻠﺤﻰ۔

(کتاب الترجل، ﺑﺎﺏ ﻓﻲ ﺃﺧﺬ اﻟﺸﺎﺭﺏ،رقم الحدیث:4199، ج:4،ص:84،ط: المکتبۃ العصریۃ)

کذا فى الدر المختار :

ﻭﺃﻣﺎ اﻷﺧﺬ ﻣﻨﻬﺎ ﻭﻫﻲ ﺩﻭﻥ ﺫﻟﻚ ﻛﻤﺎ ﻳﻔﻌﻠﻪ ﺑﻌﺾ اﻟﻤﻐﺎﺭﺑﺔ، ﻭﻣﺨﻨﺜﺔ اﻟﺮﺟﺎﻝ ﻓﻠﻢ ﻳﺒﺤﻪ ﺃﺣﺪ، ﻭﺃﺧﺬ ﻛﻠﻬﺎ ﻓﻌﻞ ﻳﻬﻮﺩ اﻟﻬﻨﺪ ﻭﻣﺠﻮﺱ اﻷﻋﺎﺟﻢ ﻓﺘﺢ.

(ج:٢،ص:٤١٨،ط: دار الفكر بيروت )

کذا فی الھدایۃ :

و لا یجوز الاستیجار علی الغناء والنوح وکذا سائر المالاھی لانہ استیجار علی المعصیہ و المعصیہ لا تستحق بالعقد۔

(ص:306، ج:3، ط: مکتبہ رحمانیہ)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Views: 39

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Business & Financial

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com