عنوان: غیر مستحق افراد کا رفاہی ادارے سے زکوۃ کی مد میں علاج کروانا(108543-No)

سوال: السلام علیکم، میری بیوی بیمار ہے، میں نہ تو خود زکوۃ کا مستحق ہوں اور نہ ہی میری بیوی، میں چاہتا ہوں کہ ایک رفاہی ادارے جس میں زکوۃ کی رقوم ہوتی ہیں، وہاں سے علاج کرواؤں، کیونکہ اگر اسپتال سے اپنے ذاتی خرچ پر علاج کرواؤں تو وہ میری دسترس سے باہر ہے، اگر میں ایسا کروں کہ رفاہی ادارے سے بیوی کا علاج کرواؤں اور پھر اپنی استطاعت کے مطابق اسی ادارے میں رقم جمع کراؤں، تو ایسا کرنا درست ہے؟

جواب: صورت مسئولہ میں اگر مذکورہ ادارہ صرف زکوۃ کی رقم سے علاج کی سہولت مہیا کرتا ہے، اور آپ میاں بیوی میں سے کوئی بھی زکوٰۃ کا مستحق نہیں ہے، تو آپ حضرات کے لئے مذکورہ ادارے سے علاج کروانا جائز نہیں ہے، اور اگر مذکورہ ادارہ زکوۃ کے علاوہ کسی اور مد میں بھی علاج کی سہولت فراہم کرتا ہو، تو آپ کے لئے اس غیر زکوٰۃ کی مد سے علاج کروانا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن المجید: (سورۃ البقرہ، رقم الآیۃ:60)
اِنَّمَا الصَّدَقٰتُ لِلْفُقَرَآءِ وَ الْمَسٰكِیْنِ وَ الْعٰمِلِیْنَ عَلَیْهَا وَ الْمُؤَلَّفَةِ قُلُوْبُهُمْ وَ فِی الرِّقَابِ وَ الْغٰرِمِیْنَ وَ فِیْ سَبِیْلِ اللّٰهِ وَ ابْنِ السَّبِیْلِؕ-فَرِیْضَةً مِّنَ اللّٰهِؕ-وَ اللّٰهُ عَلِیْمٌ حَكِیْمٌ۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 129

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com