عنوان: عورت کا ضرورت کے وقت نامحرم سے بات کرنا، اور اپنی تصویر کو پروفائل (profile) پر لگانا(108594-No)

سوال: مفتی صاحب ! خواتین کو فری لانسنگ ملازمت کے دوران کلائینٹ سے رابطہ کرنا پڑے، تو وائس کال یا ویڈیو کال (چہرہ چھپاکر) کرنے کی اجازت ہے یا نہیں؟ نیز کیا پروفائل پر اپنی تصویر، اسکارف، عبایا پہنا ہو اور چہرہ کھلا ہوا ہو، یا ہاتھ یا سائٹ پوز والی تصویر لگا سکتی ہیں یا نہیں؟ براہ کرم ان باتوں کا جواب عنایت فرمادیں۔

جواب: قرآن مجید میں اللہ تبارک و تعالیٰ نے مسلمان عورتوں کو پردہ کرنے اور بلا ضرورت گھر سے نہ نکلنے کا حکم دیا ہے، اور ضرورت کے وقت پورا جسم ڈھانپ کر گھر سے باہر نکلنے کی اجازت دی ہے۔

ارشاد باری تعالیٰ ہے:
"اے نبی ! تم اپنی بیویوں، اپنی بیٹیوں اور مسلمانوں کی عورتوں سے کہہ دو کہ وہ اپنی چادریں اپنے اوپر جھکا لیا کریں"۔ (سورۃ الاحزاب)

اسی طرح نا محرم سے غیر ضروری بات، بے تکلفی اور ان کے ساتھ خلوت (تنہائی) اختیار کرنے سے منع فرمایا ہے، البتہ ضرورت کے موقع پر پردے کا لحاظ کرتے ہوئے بات کرنے کی اجازت دی گئی ہے۔

ارشاد ربانی ہے:
"اور جب پیغمبروں کی بیویوں سے کوئی سامان مانگو تو پردے کے باہر مانگو۔ یہ تمہارے اور ان کے دونوں کے دلوں کے لئے بہت پاکیزگی کی بات ہے"(سورۃ الاحزاب)

ایک اور جگہ ارشاد فرمایا:
"اے نبی کی بیویو ! اگر تم تقوی اختیار کرو تو تم عام عورتوں کی طرح نہیں ہو۔ لہذا تم نزاکت کے ساتھ بات مت کیا کرو، کبھی کوئی ایسا شخص بیجا لالچ کرنے لگے جس کے دل میں روگ ہوتا ہے، اور بات وہ کہو جو بھلائی والی ہو"۔(سورۃ الاحزاب)

مذکورہ بالا آیات کے مطالعہ سے معلوم ہوتا ہے کہ مسلمان عورتوں کو حاجتِ شدیدہ کی صورت میں نامحرم کے ساتھ بقدرِ ضرورت گفتگو کی مشروط اجازت دی گئی ہے۔

سوال میں پوچھی گئی صورت میں اگر بات کرنا ضروری ہو، اور اس پر دنیاوی مصالح موقوف ہوں، یعنی ایسی ضرورت پائی جارہی ہو کہ اس گفتگو کے بغیر دنیوی مصالح فوت ہوتے ہوں، تو درج ذیل شرائط کے ساتھ آڈیو کال کی اجازت ہوگی:

1۔ بات کرتے وقت اس نزاکت اور لطافت کے لہجے سے بتکلف پرہیز کیا جائے، جو فطرتاً عورتوں کی آواز میں ہوتا ہے۔

2۔ مختصر اور ضروری بات کی جائے، غیر ضروری جملوں اور بات کو طول دینے سے اجتناب کیا جائے۔

3۔ بات کرنے میں فتنے کا اندیشہ نہ ہو، اگر کہیں فتنے کا اندیشہ ہو، تو وہاں بات کرنے کی اجازت نہیں ہوگی۔

واضح رہے کہ کسی بھی خاتون کے لیے جائز نہیں ہے کہ وہ ضرورت کے مواقع کے علاوہ اپنی تصویر کو بطور پروفائل (profile) استعمال کرے یا اس کی تشہیر کرے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن:(سورۃ الأحزاب، رقم الآیۃ: 53)
"يٰۤاَيُّهَا الَّذِيۡنَ اٰمَنُوۡا لَا تَدۡخُلُوۡا بُيُوۡتَ النَّبِىِّ اِلَّاۤ اَنۡ يُّؤۡذَنَ لَـكُمۡ اِلٰى طَعَامٍ غَيۡرَ نٰظِرِيۡنَ اِنٰٮهُ وَلٰـكِنۡ اِذَا دُعِيۡتُمۡ فَادۡخُلُوۡا فَاِذَا طَعِمۡتُمۡ فَانْتَشِرُوۡا وَلَا مُسۡتَاۡنِسِيۡنَ لِحَـدِيۡثٍ ؕ اِنَّ ذٰلِكُمۡ كَانَ يُؤۡذِى النَّبِىَّ فَيَسۡتَحۡىٖ مِنۡكُمۡ وَاللّٰهُ لَا يَسۡتَحۡىٖ مِنَ الۡحَـقِّ ؕ وَاِذَا سَاَ لۡتُمُوۡهُنَّ مَتَاعًا فَسۡئَـــلُوۡهُنَّ مِنۡ وَّرَآءِ حِجَابٍ ؕ ذٰ لِكُمۡ اَطۡهَرُ لِقُلُوۡبِكُمۡ وَقُلُوۡبِهِنَّ ؕ وَمَا كَانَ لَـكُمۡ اَنۡ تُؤۡذُوۡا رَسُوۡلَ اللّٰهِ وَلَاۤ اَنۡ تَـنۡكِحُوۡۤا اَزۡوَاجَهٗ مِنۡۢ بَعۡدِهٖۤ اَبَدًا ؕ اِنَّ ذٰ لِكُمۡ كَانَ عِنۡدَ اللّٰهِ عَظِيۡمًا ۞

القرآن:(سورۃ الأحزاب، رقم الآیۃ:59)
يٰۤـاَيُّهَا النَّبِىُّ قُلْ لِّاَزۡوَاجِكَ وَبَنٰتِكَ وَنِسَآءِ الۡمُؤۡمِنِيۡنَ يُدۡنِيۡنَ عَلَيۡهِنَّ مِنۡ جَلَابِيۡبِهِنَّ ؕ ذٰ لِكَ اَدۡنٰٓى اَنۡ يُّعۡرَفۡنَ فَلَا يُؤۡذَيۡنَ ؕ وَكَانَ اللّٰهُ غَفُوۡرًا رَّحِيۡمًا ۞

القرآن:(سورۃالأحزاب، رقم الآیۃ:32)
يٰنِسَآءَ النَّبِىِّ لَسۡتُنَّ كَاَحَدٍ مِّنَ النِّسَآءِ اِنِ اتَّقَيۡتُنَّ فَلَا تَخۡضَعۡنَ بِالۡقَوۡلِ فَيَـطۡمَعَ الَّذِىۡ فِىۡ قَلۡبِهٖ مَرَضٌ وَّقُلۡنَ قَوۡلًا مَّعۡرُوۡفًا ۞

القرآن:(سورۃ النور، ارقم الآیۃ:31)
وَقُلْ لِّـلۡمُؤۡمِنٰتِ يَغۡضُضۡنَ مِنۡ اَبۡصَارِهِنَّ وَيَحۡفَظۡنَ فُرُوۡجَهُنَّ وَلَا يُبۡدِيۡنَ زِيۡنَتَهُنَّ اِلَّا مَا ظَهَرَ مِنۡهَا‌ وَلۡيَـضۡرِبۡنَ بِخُمُرِهِنَّ عَلٰى جُيُوۡبِهِنَّ‌ۖ وَلَا يُبۡدِيۡنَ زِيۡنَتَهُنَّ اِلَّا لِبُعُوۡلَتِهِنَّ اَوۡ اٰبَآئِهِنَّ اَوۡ اٰبَآءِ بُعُوۡلَتِهِنَّ اَوۡ اَبۡنَآئِهِنَّ اَوۡ اَبۡنَآءِ بُعُوۡلَتِهِنَّ اَوۡ اِخۡوَانِهِنَّ اَوۡ بَنِىۡۤ اِخۡوَانِهِنَّ اَوۡ بَنِىۡۤ اَخَوٰتِهِنَّ اَوۡ نِسَآئِهِنَّ اَوۡ مَا مَلَـكَتۡ اَيۡمَانُهُنَّ اَوِ التّٰبِعِيۡنَ غَيۡرِ اُولِى الۡاِرۡبَةِ مِنَ الرِّجَالِ اَوِ الطِّفۡلِ الَّذِيۡنَ لَمۡ يَظۡهَرُوۡا عَلٰى عَوۡرٰتِ النِّسَآءِ‌ۖ وَلَا يَضۡرِبۡنَ بِاَرۡجُلِهِنَّ لِيُـعۡلَمَ مَا يُخۡفِيۡنَ مِنۡ زِيۡنَتِهِنَّ‌ ؕ وَتُوۡبُوۡۤا اِلَى اللّٰهِ جَمِيۡعًا اَيُّهَ الۡمُؤۡمِنُوۡنَ لَعَلَّكُمۡ تُفۡلِحُوۡنَ ۞

مشکوٰۃ المصابیح:( کتاب النکاح، باب النظر الی المخطوبہ)
عن النبی صلی اللہ علیہ وسلم قال:لا يخلون رجل بامرأة إلا كان الشيطان ثالثهما۔

رد المحتار:(406/1، کتاب الحظر والإباحۃ، باب شروط الصلاۃ، فصل في النظر واللمس)
نغمۃ المرأۃ عورۃ … ذکر الإمام أبو العباس القرطبي في کتابہ في السماع: ولا یظن من لا فطنۃ عندہ أنا إذا قلنا صوت المرأۃ عورۃ، أنا نرید بذٰلک کلامہا؛ لأن ذٰلک لیس بصحیح، فإنا نجیز الکلام مع النساء للأجانب ومحاورتہن عند الحاجۃ إلی ذٰلک، ولا نجیز لہن رفع أصواتہن ولا تمطیطہا ولا تلیینہا وتقطیعہا، لما في ذٰلک من استمالۃ الرجال إلیہن وتحریک الشہوات منہم، ومن ہٰذا لم یجز أن تؤذن المرأۃ، قلت: ویشیر إلی تعبیر النوازل بالنغمۃ۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 149

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Women's Issues

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com