عنوان: کیا میلاد کے لیے حاصل کیا گیا چندہ مسجد میں دے سکتے ہیں؟(108654-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب ! ایک مسئلہ دریافت کرنا تھا، ہمارے گاؤں میں ایک فلاحی تنظیم ہے، انہوں نے سب سے پہلے میلاد النبی ﷺ کی ایک تقریب منعقد کرنے کیلئے ڈونیشن اکھٹی کی، اور جو پیسے بچ جائیں گے، وہ مسجد میں لگانے کا کہا گیا تھا۔ پوچھنا یہ تھا کہ کیا اب ان پیسوں کو صرف مسجد فنڈ میں دے سکتے ہیں یا تقریب کو چھوڑ کر کسی غریب کو دے سکتے ہیں؟ اس بارے میں رہنمائی فرمائیں۔ جزاک اللہ

جواب: تقریبِ میلاد کو ترک کرنے کی صورت میں چندہ دینے والے حضرات سے رابطہ کیا جائے، جو حضرات ساری رقم مسجد فنڈ میں دینے پر آمادہ ہوں، تو ان کی رقم مسجد میں دے سکتے ہیں، اور جو راضی نہ ہوں، ان کی رقم واپس کرنا لازم ہے۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


سنن الدارقطني:(423/3،رقم الحدیث:2883،ط:مؤسسةالرسالة)
عن عمرو بن يثربي , قال: شهدت رسول الله صلى الله عليه وسلم في حجة الوداع بمنى فسمعته يقول: «‌لا ‌يحل لامرء من ‌مال أخيه شيء إلا ما ‌طابت به نفسه».

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 131

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Rights & Etiquette of Mosques

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.