عنوان: کیا سسر بہو سے جسمانی خدمت کروا سکتا ہے؟(108809-No)

سوال: کیا سسر اپنی بہو سے پاؤں وغیرہ دبواسکتا ہے؟

جواب: سسر کا بہو سے جسمانی خدمت مثلاً: ہاتھ پاؤں دبوانے میں فتنہ کا اندیشہ ہے، اگر ہاتھ پاؤں دبواتے وقت شہوت پیدا ہوگئی، تو بیوی شوہر پر ہمیشہ کے لیے حرام ہو جائے گی، اس لئے احتیاط کا تقاضہ یہ ہے کہ بہو سے جسمانی خدمت نہیں لی جائے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار: (6 / 369)
"(قوله: والصهرة الشابة) قال في القنية: ماتت عن زوج وأم فلهما أن يسكنا في دار واحدة إذا لم يخافا الفتنة، وإن كانت الصهرة شابةً فللجيران أن يمنعوها منه إذا خافوا عليهما الفتنة اهـ. وأصهار الرجل كل ذي رحم محرم من زوجته على اختيار محمد، والمسألة مفروضة هنا في أمها، والعلة تفيد أن الحكم كذلك في بنتها ونحوها، كما لايخفى".

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Prohibited & Lawful Things

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com