عنوان: مہمان کے پسند کا کھانا تیار کرنا(108816-No)

سوال: مفتی صاحب! کسی کی دعوت کرتے وقت اس کی پسند کا خیال رکھنا چاہیے یا جو میزبان مناسب سمجھے، وہ کرلے؟ براہ کرم رہنمائی فرمادیں۔

جواب: حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے مسلمانوں کو اپنے مہمانوں کی عزت کرنے، اور ان کی خاطر داری کرنے کا حکم دیا ہے، مہمان کو خوش کرنے کے لئے اس کے پسند کا کھانا تیار کرنا سنت سے ثابت ہے۔
حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ ایک دعوت کا حال بیان کرتے ہوئے فرماتے ہیں کہ ہم نبی کریم ﷺ کے ساتھ ایک دعوت میں شریک تھے، آپ ﷺ کی خدمت میں دستی کا گوشت پیش کیا گیا، جو آپ ﷺ کو بہت مرغوب تھا، چنانچہ آپ ﷺ نے اس دستی کے گوشت میں سے نوچ نوچ کر تناول فرمایا۔
(بخاری، رقم الحدیث: 3340)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

صحیح البخاری: (رقم الحدیث: 6135، كتاب الأدب)
عَنْ أَبِي شُرَيْحٍ الْكَعْبِيِّ ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ : مَنْ كَانَ يُؤْمِنُ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ فَلْيُكْرِمْ ضَيْفَهُ جَائِزَتُهُ يَوْمٌ وَلَيْلَةٌ وَالضِّيَافَةُ ثَلَاثَةُ أَيَّامٍ ، فَمَا بَعْدَ ذَلِكَ فَهُوَ صَدَقَةٌ ، وَلَا يَحِلُّ لَهُ أَنْ يَثْوِيَ عِنْدَهُ حَتَّى يُحْرِجَهُ۔

صحیح البخاری: (رقم الحدیث: 3340)
حَدَّثَنِي إِسْحَاقُ بْنُ نَصْرٍ ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عُبَيْدٍ ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبُو حَيَّانَ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي زُرْعَةَ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ كُنَّا مَعَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي دَعْوَةٍ فَرُفِعَ إِلَيْهِ الذِّرَاعُ وَكَانَتْ تُعْجِبُهُ فَنَهَسَ مِنْهَا نَهْسَةً۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 177
mehman / guest ke / kay pasand ka khana tayar karna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Halaal & Haram In Eatables

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.