عنوان: کیا قبر میں موجود مردوں کو قبر پر آنے والی عورتیں برہنہ نظر آتی ہیں؟ (8847-No)

سوال: حضرت ! ہمارے ہاں عوام میں مشھور ہے کہ جو عورت قبرستان میں جاتی ہے، تو قبر والوں کو وہ ننگی نظر آتی ہے، کیا یہ حدیث ہے یا نہیں؟ حضرت مجھے اس کی تحقیق درکار ہے۔

جواب: عام حالات میں عورتوں کے لیے قبرستان جانا شرعاً منع ہے، لیکن یہ بات جو لوگوں میں مشہور ہے کہ "قبر میں موجود مردوں کو قبر پر آنے والی عورتیں برہنہ نظر آتی ہیں" درست نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (242/2، ط: دار الفکر)
قوله: ولو للنساء) وقيل: تحرم عليهن. والأصح أن الرخصة ثابتة لهن بحر، وجزم في شرح المنية بالكراهة لما مر في اتباعهن الجنازة. وقال الخير الرملي: إن كان ذلك لتجديد الحزن والبكاء والندب على ما جرت به عادتهن فلا تجوز، وعليه حمل حديث «لعن الله زائرات القبور» وإن كان للاعتبار والترحم من غير بكاء والتبرك بزيارة قبور الصالحين فلا بأس إذا كن عجائز. ويكره إذا كن شواب كحضور الجماعة في المساجد اه وهو توفيق حسن.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 589
kia qabar me / may mojod murdo / murdon per / par aane wali oraten / ladies barhana nazar ate / aate he / hein / hain?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Interpretation and research of Ahadees

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.