عنوان: چرچ میں کھانے کی ڈیلیوری دینے کا حکم (8881-No)

سوال: مفتی صاحب! کیا کھانا ڈیلیور کرنے والے کے لیے چرچ میں کھانے کی ڈیلیوری دینا جائز ہے؟

جواب: چرچ میں حلال کھانے کی ڈیلیور ی دینا جائز ہے،البتہ اگر کسی کے بارے میں یقینی طور پر معلوم ہوجائے کہ وہ کسی غلط عقیدے کے تحت کھانا منگوارہا ہے، تو اس کو کھانے کی ڈیلیوری نہ دینا بہتر ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الفتاوی الھندیة: (348/5، ط: دار الفکر)
في المحيط لا بأس بأن يكون بين المسلم والذمي معاملة إذا كان مما لا بد منه كذا في السراجية.۔۔۔ وفي مجموع النوازل إذا دخل يهودي الحمام هل يباح للخادم المسلم أن يخدمه قال إن خدمه طمعا في فلوسه فلا بأس به وإن خدمه تعظيما له ينظر إن فعل ذلك ليميل قلبه إلى الإسلام فلا بأس به وإن فعل تعظيما لليهودي دون أن ينوي شيئا مما ذكرنا كره له ذلك.

کذا فی تبویب فتاوی دار العلوم کراتشی: رقم الفتوی: 78/2209

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 587 Dec 08, 2021
charch me / may khane / khaney ki delivery dene ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Employee & Employment

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.