عنوان: والد کا اپنی بیٹی کو بلاحجاب کسی ادارے میں بھیجنے کا حکم(108959-No)

سوال: مفتی صاحب ! میں اپنی بیٹی کو کسی ادارہ میں بھیجنا چاہتا ہوں، لیکن وہاں چہرہ کا حجاب کرنے پر پابندی ہے، تو کیا کسی ایسے ادارہ میں جہاں چہرہ کے حجاب پر پابندی ہو، بھیج سکتے ہیں؟

جواب: واضح رہے کہ عورتوں پر نامحرم مردوں سے پردہ کرنا لازم اور ضروری ہے، لہذا سوال میں ذکر کردہ صورت میں والد کا اپنی بیٹی کو ایسے ادارے میں بھیجنا، جہاں نامحرم مردوں سے پردہ کرنے پر پابندی ہو، جائز نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (الأحزاب، الآية: 59)
يَآ اَيُّهَا النَّبِىُّ قُلْ لِّاَزْوَاجِكَ وَبَنَاتِكَ وَنِسَآءِ الْمُؤْمِنِيْنَ يُدْنِيْنَ عَلَيْهِنَّ مِنْ جَلَابِيبِْهِنَّ ۚ ذٰلِكَ اَدْنٰٓى اَنْ يُّعْرَفْنَ فَلَا يُؤْذَيْنَ ۗ وَكَانَ اللّٰهُ غَفُوْرًا رَّحِيْمًاo

التفسير المظهري: (496/6، ط: مكتبة رشيدية)
يُدْنِينَ عَلَيْهِنَّ مِنْ جَلَابِيبِهِنَ
الاية- قال ابن عباس وابو عبيدة أمرت نساء المؤمنين ان يغطين رءوسهن ووجوههن بالجلابيب الا عينا واحدا يعلم انهن حرائر.

الدر المختار مع رد المحتار: (مطلب فی ستر العورۃ، 406/1، ط: دار الفکر)
وتمنع) المرأة الشابة (من كشف الوجه بين رجال) لا لأنه عورة بل (لخوف الفتنة) كمسه وإن أمن الشهوة لأنه أغلظ.
(قوله وتمنع المرأة إلخ) أي تنهى عنه وإن لم يكن عورة (قوله بل لخوف الفتنة) أي الفجور بها قاموس أو الشهوة. والمعنى تمنع من الكشف لخوف أن يرى الرجال وجهها فتقع الفتنة لأنه مع الكشف قد يقع النظر إليها بشهوة.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 151
walid / baap ka apni beti / daughter ko bila hijab kisi idare me / may bhejne ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Employee & Employment

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.