عنوان: مختلف اداروں کے باہر ایجنٹ بن کر لوگوں کے کام کرنے اور اجرت لینے کا حکم (109181-No)

سوال: مختلف اداروں کے باہر جو لوگ ایجنٹ بن کر بیٹھے ہوئے ہوتے ہیں، ان کی آمندی کا کیا حکم ہے؟

جواب: کسی کا ایجنٹ (وکیل) بن کر جائز کام کرنا اور اس پر طے شدہ اجرت وصول کرنا شرعا درست ہے، بشرطیکہ اس میں دیگر غیر شرعی امور (مثلاً: جھوٹ، خیانت، دھوکہ اور رشوت وغیرہ) کا ارتکاب لازم نہ آئے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

شرح المجلۃ: (رقم المادۃ: 1467)
اذا اشترطت الاجرۃ فی الوکالۃ و اوفاھا الوکیل یستحقہا

الفقہ الاسلامی و ادلته: (2997/4، ط: دار الفکر)
تصح الوکالۃ باجر و بغیر اجر لان النبیﷺ کان یبعث عمالہ لقبض الصدقات ویجعل لہم عمولۃ

رد المحتار: (74/6، ط: دار الفکر)
قال في البزازية: إجارة السمسار والمنادي والحمامي والصكاك وما لا يقدر فيه الوقت ولا العمل تجوز لما كان للناس به حاجة ويطيب الأجر المأخوذ

الدر المختار مع رد المحتار: (کتاب الإجارۃ، شروط الاجارہ، 6/5، ط: دار الفکر)
وشرطہا : کون الأجرۃ والمنفعۃ  معلومتین، لأن جہالتہما تفضي إلی المنازعۃ

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 154
mukhtalif idaro / offices / daftaro k / kay bahir egent ban kar logo k / kay kam karne or ujrat lene ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Employee & Employment

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.