عنوان: صدقہ کی نیت سے الگ کی ہوئی رقم استعمال کرنا (9331-No)

سوال: مفتی صاحب ! کیا صدقہ کی نیت سے الگ کیے ہوئے پیسے ضرورت کے وقت استعمال کر سکتے ہیں؟

جواب: واضح رہے کہ صرف صدقہ کی نیت سے رقم الگ کر کے رکھنے سے اس رقم کا صدقہ کرنا لازم نہیں ہوتا ہے، بلکہ وہ رقم اس وقت تک ملکیت میں برقرار رہتی ہے، جب تک اس کو صدقہ نہ کردیا جائے، لہذا ضرورت پڑنے پر اس رقم کو استعمال کر سکتے ہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار مع رد المحتار: (270/2، ط: دار الفكر)
ولا يخرج عن العهدة بالعزل بل بالأداء للفقراء۔۔۔
(قوله: ولا يخرج عن العهدة بالعزل) فلو ضاعت لا تسقط عنه الزكاة ولو مات كانت ميراثا عنه، بخلاف ما إذا ضاعت في يد الساعي لأن يده كيد الفقراء بحر عن المحيط.

المبسوط للسرخسي: (25/14، ط: دار المعرفة)
إِنَّ الدَّرَاهِمَ وَالدَّنَانِيرَ لَا تَتَعَيَّنُ بِالتَّعْيِينِ.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 176
sadqa ki niyat se / say alag ki hoi raqam istemal karna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.