عنوان: ذاتی اکاؤنٹ میں موجود سرکاری رقم پر زکوۃ کا حکم(109425-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب ! ایک ٹیچر کے اکاونٹ میں سکول کے فنڈ کی مد میں سرکاری روپے ہیں، جو کہ نصاب سے زیادہ ہیں، یہ روپے سرکار کے ہیں، اس میں ٹیچر کی کوئی ملکیت نہی ہے، اس پر سال گزرنے کے بعد زکوۃ کا کیا حکم ہوگا؟

جواب: سوال میں ذکر کردہ صورت میں چونکہ آپ کے اکاؤنٹ میں موجود رقم آپ کی ذاتی ملکیت نہیں ہے، لہذا اس کی زکوۃ آپ پر واجب نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

بدائع الصنائع: (فصل الشرائط اللتي ترجع الي المال، 9/2، ط: دار الكتب العلمية)

وأما الشرائط التي ترجع الي المال فمنها: الملك فلا تجب الزكاة في سوائم الوقف والخيل المسبلة لعدم الملك وهذا؛ لأن في الزكاة تمليكا والتمليك في غير الملك لا يتصور.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 215
zati account me / mein mojod sarkari raqam per / par zakat ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.