عنوان: میت کی وصیت کے بغیر اس کے متروکہ مال سے زکوۃ ادا کرنے کا حکم(9478-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! اگر کسی نے سال کی زکوٰۃ نہیں دی یا کبھی ادا ہی نہیں کی، اور اس کا انتقال ہوگیا، اب پیچھے رہنے والوں نے ان کا مال بیچ کر ان کی زکوٰۃ ادا کردی، حالانکہ مرحومہ نے وصیت نہیں کی تھی، تو کیا ایسی صورت میں مرحومہ کی زکوٰۃ ادا ہوجائے گی؟ رہنمائی فرمادیں۔

جواب: مرحومہ کے وصیت نہ کرنے کی وجہ سے اگرچہ ورثاء کے ذمہ ان کی زکوۃ ادا کرنا ضروری نہیں ہے، تاہم اگر سارے عاقل بالغ ورثاء کی رضامندی سے وراثت کے مال سے زکوۃ ادا کی گئی ہے تو ایسا کرنا درست ہے، امید ہے کہ اللہ تعالیٰ اسے قبول فرما کر مرحومہ کو آخرت کی باز پرسی سے محفوظ فرمائیں گے۔
لیکن اگر ورثاء میں کوئی نابالغ ہے، تو اس کی رضامندی معتبر نہیں ہے، لہٰذا اس كے حصے سے مرحومہ کی زکوۃ کی ادائیگی درست نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (74/2، ط: دار الفكر)
وظاهر كلامهم أنه لو كان عليه زكاة لا تسقط عنه بدون ‌وصية ‌لتعليلهم، لعدم وجوبها بدون ‌وصية باشتراط النية فيها لأنها عبادة فلا بد فيها من الفعل حقيقة أو حكما، بأن يوصي بإخراجها فلا يقوم الوارث مقامه في ذلك. ثم رأيت في صوم السراج التصريح بجواز تبرع الوارث بإخراجها.

فتاوی رحیمیة: (10/243، ط: دار الاشاعت)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 488 May 18, 2022
mayyat ki wasiyat / wasiat k / kay baghair us k / kay matroka maal se / say zakat ada karne ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.