عنوان: عیسائی کے پاس بی سی ڈالنے کا حکم(9538-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! کسی عیسائی شخص کے پاس بی سی ڈالنا صحیح ہے یا نہیں؟ رہنمائی فرمادیں۔

جواب: جی ہاں! عیسائیوں کے ساتھ دیگر مالی معاملات کی طرح بی سی کا معاملہ کرنا بھی جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

صحيح البخاري: (رقم الحديث: 2096، ط: دار طوق النجاة)

حدثنا يوسف بن عيسى حدثنا أبو معاوية حدثنا الأعمش عن إبراهيم عن الأسود عن عائشة رضي الله عنها، قالت: اشتري رسول الله صلی الله عليه وسلم من يهودي طعاما بنسيئة ورهنه درعه.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 166
esai / christion k / kay pas bc dalne ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Characters & Morals

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.