عنوان: ماموں زاد بہن کو زکوٰۃ دینا(9682-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! میرا دوست جو کہ غیر سید ہے، کیا وہ اپنی ماموں زاد بہن کو زکوۃ دے سکتا ہے؟ اور کیا اس کو یہ بتانا ضروری ہے کہ یہ پیسے زکوۃ کے ہیں؟

جواب: اگر آپ کے دوست کی ماموں زاد بہن مستحقِ زکوۃ ہوں، تو آپ کے دوست اپنی ماموں زاد بہن کو زکوٰۃ دے سکتے ہیں۔
نیز واضح رہے کہ مستحقِ زکوٰۃ کو بغیر بتائے بھی زکوٰۃ دی جاسکتی ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

بدائع الصنائع: (50/2، ط: سعید)
"ویجوز دفع الزکاۃ إلی من سوی الوالدین والمولودین من الأقارب ومن الإخوۃ والأخوات وغیرہم لانقطاع منافع الأملاک بینہم".

الدر المختار مع رد المحتار:(268/2، ط: دار الفکر)
(وشرط صحة أدائها نية مقارنة له) أي للأداء۔۔۔
(قوله نية) أشار إلى أنه لا اعتبار للتسمية؛ فلو سماها هبة أو قرضا تجزيه في الأصح۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 85
mamuzad / mamu zad behen ko zakat dena

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.