عنوان: سعی نہ کرنے کا شک ہو تو کیا حکم ہے ؟(9684-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب! ایک آدمی نے حج یا عمرہ کیا اور کافی مدت بعد اس کو وسوسہ یا شک گزرا کہ اس نے طواف کے بعد سعی کی ہے یا نہیں کی، اب اس شک کا کیا ازالہ ہے؟ جبکہ ابھی وہ دوسرا حج ادا کر کے مکة المکرمة میں 8 دن کے لیے موجود ہے۔

جواب: سوال میں ذکرکردہ صورت میں آپ کو محض شک ہے، تو اس شک کا کوئی اعتبار نہیں ہے، لہذا اس کی طرف توجہ نہیں دینی چاہیے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

غنية الناسك: (باب السعي بين الصفا و المروة، ص: 131، ط: ادارۃ القرآن)
والشك إنما يعتبر في أثناء السعى والطواف، وأما إذا شك بعد الفراغ، فلا شيء عليه، كما صر حوا به في الصلاة والوضوء اه، كذا في الكبیر.

الأشباہ و النظائر: (ص: 183، ط: ادارۃ القرآن)
اليقين لا يزول بالشك.

و فیه أيضاً: (ص: 323)
وحاصله أن الظن عند الفقهاء من قبيل الشك لأنهم يريدون به التردد بين وجود الشيء وعدمه، سواء استويا أو ترجح أحدهما...... وغالب الظن عندهم ملحق باليقين وهو الذي يبتنی عليه الأحكام.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 77
sai / saeiy/ saai na karne ka shak ho to kia hokom / hokum he / hea?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Hajj (Pilgrimage)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.