عنوان: بینک میں سیکورٹی گارڈ کی ملازمت اختیار کرنا(9738-No)

سوال: بینک میں سکیورٹی گارڈ کی نوکری کرنا جائز ہے یا ناجائز؟

جواب: واضح رہے کہ سودی بینک میں ایسی ملازمت جس کا تعلق براہ راست سودی معاملات سے نہ ہو، نہ اس کا تعلق سود لکھنے سے ہو، نہ سود پر گواہ بننے سے، اور نہ ہی سودی معاملہ میں کسی قسم کی شرکت ہوتی ہو، جیسے چوکیدار وغیرہ کی ملازمت، تو ایسی ملازمت اختیار کرنا اگرچہ جائز ہے، مگر بہتر نہیں ہے، تاہم ایسی ملازمت سے ملنے والی تںخواۃ کو حرام نہیں کہا جائے گا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (المائدة، الایة: 2)
وَلَا تَعَاوَنُوا عَلَى الْإِثْمِ وَالْعُدْوَانِ وَاتَّقُوا اللَّهَ إِنَّ اللَّهَ شَدِيدُ الْعِقَابِ o

صحیح مسلم: (رقم الحدیث: 4093)
عن جابرؓ قال: لعن رسول اللّٰہ صلی اللہ علیه وسلم اٰکل الربا وموکله وکاتبه وشاهدیه، وقال: هم سواء.

فقه البیوع: (التعامل مع البنوك الربوية، الباب العاشر، 1031/2، ط معارف القرآن، کراچی)
السابع:أن یؤجر المرأ نفسه للبنك بان یقبل فیه وظیفة،فان کانت الوظیفة تتضمن مباشرۃ العملیات الربویة،أوالعملیات المحرمة الأخری،فقبول ھذہ الوظیفة حرام، وذلك مثل التعاقد بالربوا أخذا أوعطاء، أوخصم الکمبیالات، أوکتابة ھذہ العقعود ،أو التوقیع علیھا ۔۔۔۔۔ من کان موظفاً فی البنك بھذہ الشکل،فان راتبه الذی یاخذ من البنك کله من الأکساب المحرمة۔۔۔۔
أما اذا کانت الوظیفة لیس لھا علاقة مباشرۃ بالعملیات الربویة، مثل وظیفة الحارس أو سابق السیارۃ ۔۔۔ فلا یحرم قبولھا ان لم یکن بنیة الاعانة علی العملیات المحرمة، وان کان الاجتناب عنھا أولی، ولا یحکم فی راتبه بالحرمة

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 845 Aug 02, 2022
bank me / mein secuirty gaurd ki mulazmat / mulazimat ikhtyar / ikhtiyar karna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Employee & Employment

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.