عنوان: گزشتہ سال کی بقایا زکوٰۃ رواں سال میں ادا کرنا(9847-No)

سوال: اگر کوئی شخص ایک سال میں بھی مکمل زکوٰۃ ادا نہ کرسکے تو کیا زکوٰۃ کی بقیہ رقم کو آئندہ سال کی زکوٰۃ کے ساتھ ملاکر ادا کرسکتے ہیں؟

جواب: یاد رہے کہ صاحب نصاب کے مال پر سال گزرنے سے زکوٰۃ واجب ہوجاتی ہے، جسے حتی الامکان جلد از جلد ادا کرنے کی کوشش کرنی چاہئیے، ایک سال کی زکوۃ کو بلاوجہ اگلے سال کی زکوۃ واجب ہونے تک موخر کرنا مکروہ اور ناپسندیدہ عمل ہے، اور جب تک صاحب نصاب شخص یہ زکوٰۃ ادا نہ کردے، زکوٰۃ اس کے ذمہ سے ساقط نہیں ہوتی ہے، لہذا سوال میں پوچھی گئی صورت میں مذکورہ شخص پر لازم ہے کہ وہ اِس سال کی زکوٰۃ کے ساتھ سابقہ سال کی مابقیہ زکوٰۃ بھی ادا کردے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الھدایة: (200/1، ط: مکتبة رحمانیة)
الزکوٰۃ واجبة علی الحر العاقل البالغ المسلم اذا ملك نصاباً ملكاً تاماً و حال علیه الحول۔

المحیط البرھاني: (239/2، ط: دار الکتب العلمیة)
ذکر ابو الحسن الکرخی رحمه اللہ فی کتابه انھا علی الفور، وذکر الحاکم الشھید فی المنتقی انھا علی الفور عند ابی یوسف ومحمد رحمھما اللہ ..... وقال ابوبکر الرازي رحمه اللہ انھا تجب علی التراخي، وھکذا روي ابن شجاع والبلخي عن اصحابنا. قال البلخي رحمه اللہ وکذلك الحج، وھذا لانه لیس فی کتاب اللہ تعالي وما فی سنة رسوله صلی اللّٰہ علیه وسلم بیان وقت اداء الزکوۃ ولا یمکن اتیانه قیاسا.

الفتاوي الهندية:(170/1، ط: مکتبة رشیدیة)
وَتَجِبُ عَلَى الْفَوْرِ عِنْدَ تَمَامِ الْحَوْلِ حَتَّى يَأْثَمَ بِتَأْخِيرِهِ مِنْ غَيْرِ عُذْرٍ ، وَفِي رِوَايَةِ الرَّازِيّ عَلَى التَّرَاخِي حَتَّى يَأْثَمَ عِنْدَ الْمَوْتِ ، وَالْأَوَّلُ أَصَحُّ كَذَا فِي التَّهْذِيبِ۔

واللّٰه تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 422 Oct 03, 2022
guzishta saal ki baqaya zakat rawa / rawan saal me ada karna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Zakat-o-Sadqat

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.