عنوان: سودی لین دین کرنے والے شخص کے پاس مزدوری کرنے کے عوض اجرت لینے کا حکم (10161-No)

سوال: ایک شخص سود وغیرہ کا لین دین کرتا ہے، اس کے پاس مزدوری کرنے اور مزدوری کے عوض اس سے تنخواہ لینے کا کیا حکم ہے؟

جواب: اگر اس شخص کی کل آمدن حرام کی ہے تو حرام مال میں سے اجرت لینا شرعا درست نہیں ہے، بلکہ اس سے مطالبہ کیا جائے کہ وہ اجرت حلال مال میں سے دے، اور اگر اس کی آمدنی حلال اور حرام سے مخلوط ہو لیکن غالب آمدنی حلال کی ہو، اور وہ آپ کو اجرت اپنی حلال آمدنی میں ے دے رہا ہے تو اس سے جائز کام کے عوض اجرت لینا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

فقه البیوع: (1052/2، ط: معارف القرآن)
المال المغصوب وما في حكمه مثل ما قبضه الإنسان رشوة أو سرقة أو بعقد باطل شرعاً، لا يحل له الانتفاع به، ولا بيعه وهبته، ولا يجوز لأحد يعلم ذلك أن يأخذه منه شراء أو هية أو إرثاً.

فقه البیوع: (1054/2، ط: معارف القرآن)
إن لم يُعرف في المخلوط من الحلال والحرام أنهما متميزان أو مختلطان، وكم حصة الحلال في المخلوط؟ فالأولى التنزه، ولكن يجوز التعامل بذلك المخلوط إذا غلب على الظن أن المتعامل به لا يتجاوز قدر الحلال.

واللہ تعالیٰ أعلم بالصواب
دار الافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 620 Jan 16, 2023
sodi / soodi lain dain / lenden karne wale shakhs / aadmi k paas / pass mazdori / kaam karne k ewaz ujrat lene ka hokom /hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Employee & Employment

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.