عنوان: آنحضرت صلّی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم کے وسیلے سے دعا مانگنے کا حکم(101021-No)

سوال: حضرت ! روضہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے کیا یہ دعا کی جا سکتی ہے کہ اللہ رسول صلی اللہ علیہ وآلہ کی برکت سے میرا فلاں کام بنا دے یا یہ دعا كہ یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم آپ اللہ سے دعا کیجئے کہ ہمارا فلاں کام ہو جائے ؟

جواب: ١- انبیاء و اولیاء کے وسیلے سے دعاء مانگنا بلاشبہ جائز ہے، تاہم ان کے وسیلے سے دعاء مانگتے ہوئے یہ عقیدہ رکھنا کہ ان کے وسیلے کے بغیر دعاء قبول نہیں ہوگی، درست نہیں۔
٢- صرف روضئہ اقدس کے سامنے حاضر ہوکر آنحضرت صلّی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم سے اپنے لیے اللہ جلّ شانہ سے دعاء کی درخواست کرنا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی المھند علی المفند:

عندنا وعند مشايخنا يجوز التوسل في الدعوات بالأنبياء والصالحين من الأولياء والشهداء والصديقين في حياتهم وبعد وفاتهم بأن يقول في دعائه اللهم اني أتوسل الیک بفلان أن تجيب دعوتی وتقضي حاجتي إلى غير ذلك كما صرح به شیخنا و مولانا الشاه محمد إسحاق الدهلوی ثم المهاجر المکی ثم بينه في فتاواه شخينا و مولانا رشيد أحمد الکنکوهی رحمة الله۔۔الخ

(ص: 93، ط: ادارہ اسلامیات)

وفی الھدایۃ:

"ويكره أن يقول الرجل في دعائه بحق فلان أو بحق أنبياؤك ورسلك"؛ لأنه لا حق للمخلوق على الخالق.

(ج: 4، ص: 380، ط: دار احیاء التراث العربی)

وفی الموسوعۃ الفقھیۃ الکویتیۃ:

وأما الحنفية فقد صرح متأخروهم أيضا بجواز التوسل بالنبي صلى الله عليه وسلم. قال الكمال بن الهمام في فتح القدير: ثم يقول في موقفه: السلام عليك يا رسول الله. . . ويسأل الله تعالى حاجته متوسلا إلى الله بحضرة نبيه عليه الصلاة والسلام.

(ج: 14، ص: 158، ط: دار السلاسل)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 199
anhazar salal lahu tallah waslam ky waseely se dua mangna, order of pray with access of prophet P.B.U.H

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com