عنوان: موبائل نہ دلانے پر لڑکے کے خودکشی کرنے سے والدین کا گناہ گار ہونا(10352-No)

سوال: ایک بچہ جس کی عمر سترہ سال ہے، اُس نے اپنے والدین سے موبائل خرید کر دلوانے کے لیے بولا، والدین نے موبائل نہیں دیا تو اُس لڑکے نے خودکشی کر لی۔ اب پوچھنا یہ ہے کہ کیا اس کا گناہ والدین کو ملے گا اور عمر کے اعتبار سے اُس کے ساتھ آخرت میں کیا معاملہ کیا جائے گا؟

جواب: واضح رہے کہ اولاد کو موبائل لے کر دینا والدین کی ذمہ داری نہیں ہے، لہٰذا اس خواہش کو پورا نہ کرنے پر لڑکے کے خودکشی کرنے سے والدین گناہ گار نہیں ہوں گے۔
نیز سترہ سال کا لڑکا شرعا بالغ ہوتا ہے جو تمام شرعی احکام کا مکلف ہوتا ہے اور کسی بھی مسلمان کے لیے خود کشی کرنا حرام اور سخت گناہ کا کام ہے۔ احادیث میں خودکشی کرنے والے کے لیے سخت وعیدیں بیان کی گئی ہیں، اس لیے والدین کو چاہیے کہ لڑکے کی طرف سے صدقہ خیرات کریں اور اللہ تعالیٰ سے اس کی مغفرت کی دعا بھی کرتے رہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الكريم: (فاطر، الآية: 18)
‌وَلَا ‌تَزِرُ وَازِرَةٞ وِزۡرَ أُخۡرَىٰۚ وَإِن تَدۡعُ مُثۡقَلَةٌ إِلَىٰ حِمۡلِهَا لَا يُحۡمَلۡ مِنۡهُ شَيۡءٞ وَلَوۡ كَانَ ذَا قُرۡبَىٰٓۗ ... الخ

و قوله تعالی: (التحريم، الآية: 6)
يَٰٓأَيُّهَا ٱلَّذِينَ ءَامَنُواْ ‌قُوٓاْ ‌أَنفُسَكُمۡ وَأَهۡلِيكُمۡ نَارٗا وَقُودُهَا ٱلنَّاسُ وَٱلۡحِجَارَةُ عَلَيۡهَا مَلَٰٓئِكَةٌ غِلَاظٞ شِدَادٞ لَّا يَعۡصُونَ ٱللَّهَ مَآ أَمَرَهُمۡ وَيَفۡعَلُونَ مَا يُؤۡمَرُونَ o

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 454 Mar 08, 2023
waldein ka mobile na dilane per larke / larkey / bete / oulad / olad / bachey ka khodkushi karna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.