عنوان: انکار شریعت اور کفر کرنے کا حکم(101364-No)

سوال: شریعت کا انکار یا کفر کرنا ! وضاحت کریے گا کہ کیا اِس کا مطلب ایمان سے خارج ہوجانا ہے یا اِس کا مترادف ہے ؟ کیوں کہ کفر کرنے سے تو یہی سمجھ میں آتا ہے تو کیا دوبارہ استغفار کر کے مسلمان ہونا پڑے گا ؟ یعنی کلمہ پڑھنا پڑے گا ؟

جواب: واضح رہے کہ اگر کوئی شخص زبان سے مثلا: اللہ تعالی کی ذات و صفات کے بارے میں کوئی توہین آمیز گفتگو کرے، یا انبیاء علیہم الصلاة والسلام کی شان میں گستاخی کرے، یا ضروریات دین ( جن باتوں پر ایمان لانا ضروری ہے) کا انکار کرے، یا کفریہ اور شرکیہ عمل کا ارتکاب کرے، مثلا: اللہ کے علاوہ کسی کو معبود سمجھ کر سجدہ کرلے وغیرہ، ان سب باتوں سے وہ انسان کافر اور دائرہ اسلام سے خارج ہوجاتا ہے اور اگر شادی شدہ ہے تو اس کا نکاح ٹوٹ جاتا ہے۔
لہذا ایسا شخص اپنے ایمان کی تجدید کرے گا یعنی نئے سرے سے کلمہ شہادت پڑھ کر ایمان لائے گا، اور اگر شادی شدہ ہے تو اپنی زوجہ سے شرعی طریقہ پر دوبارہ نکاح کرے گا۔
نوٹ : چونکہ سوال میں کسی کفریہ کلمے اور عمل کا ذکر نہیں کیا گیا تھا، اس لیے اصولی جواب لکھا گیا ہے، لہذا کسی کفریہ کلمے اور عمل کے بارے میں وضاحت کرکے اس کا حکم معلوم کیا جائے، کیونکہ کسی کو کافر قرار دینا نہایت حساس نوعیت کا معاملہ ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الھندیۃ:

من شك في إيمانه، وقال: أنا مؤمن إن شاء الله، فهو كافر إلا إذا أول، فقال: لا أدري أخرج من الدنيا مؤمنا، فحينئذ لا يكفر، ومن قال بخلق القرآن، فهو كافر، وكذا من قال بخلق الإيمان فهو كافر ومن اعتقد أن الإيمان والكفر واحد فهو كافر ومن لا يرضى بالإيمان فهو كافر كذا في الذخيرة۔۔۔يكفر إذا وصف الله تعالى بما لا يليق به، أو سخر باسم من أسمائه، أو بأمر من أوامره، أو نكر وعده ووعيده، أو جعل له شريكا، أو ولدا، أو زوجة، أو نسبه إلى الجهل، أو العجز، أو النقص ويكفر بقوله يجوز أن يفعل الله تعالى فعلا لا حكمة فيه ويكفر إن اعتقد أن الله تعالى يرضى بالكفر كذا في البحر الرائق.

(ج: 2، ص: 257، ط: دار الفکر)

وفیہ ایضاً:

سئل عمن ينسب إلى الأنبياء الفواحش كعزمهم على الزنا ونحوه الذي يقوله الحشوية في يوسف - عليه السلام - قال: يكفر؛ لأنه شتم لهم واستخفاف بهم قال أبو ذر من قال: إن كل معصية كفر، وقال: مع ذلك أن الأنبياء - عليهم السلام - عصوا فكافر؛ لأنه شاتم، ولو قال: لم يعصوا حال النبوة ولا قبلها كفر؛ لأنه رد المنصوص.

(ج: 2، ص: 263، ط: دار الفکر)

وفی الشامیۃ:

وفي شرح الوهبانية للشرنبلالي: ما يكون كفرا اتفاقا يبطل العمل و النکاح۔۔۔الخ

(ج: 4، ص: 246، ط: دار الفکر)

وفیہ ایضا:

(وما أدى منها فيه يبطل، ولا يقضي) من العبادات (إلا الحج) لأنه بالردة صار كالكافر الأصلي، فإذا أسلم وهو غني فعليه الحج فقط.

(ج: 4، ص: 251، ط: دار الفکر)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 313
inkaar e shariat/sharyat/shariah aur kufr/kofr karne/karnay ka hukm/hukum/hokm , Rulings regarding declining/denying/not accepting the shariah/shariat/sharyah and performing kufr/kofr

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Beliefs

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com