عنوان: رشتہ کروانے پر فیس لینا(1382-No)

سوال: جو لوگ رشتے کراتے ہیں، میرج بیورو وغیرہ کھولتے ہیں، اس سلسلے میں وہ پیسے بھی لیتے ہیں۔ تو کیا یہ شرعاً جائز ہے؟

جواب: رشتہ طے کروانے پر فیس لینا جائز ہے، بشرطیکہ فیس پہلے سے طے کی جائے، اور اس بات کا خیال بھی رکھا جائے کہ رشتہ کروانے میں مبالغے سے کام نہ لیا جائے اور دیانت داری سے دونوں فریقوں کی خیر خواہی مد نظر رکھ کر رشتے کی بات چلائی جائے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (64/6، ط: دار الفکر)

قال في التتارخانية: وفي الدلال والسمسار يجب أجر المثل، وما تواضعوا عليه أن في كل عشرة دنانير كذا فذاك حرام عليهم. وفي الحاوي: سئل محمد بن سلمة عن أجرة السمسار، فقال: أرجو أنه لا بأس به وإن كان في الأصل فاسدا لكثرة التعامل وكثير من هذا غير جائز، فجوزوه لحاجة الناس إليه كدخول الحمام

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1009
Rishta karwanay per fees lena, Takes charges for match making

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Business & Financial

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.