عنوان: کسی کے ذمہ قرآن کریم کے سپارے پڑھنا لازم کرنے کا حکم(101486-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب ! اکثر ایسا ہوتا ہے کہ ہمیں کوئی قرآن کا کوئی سپارہ پڑھنے کا کہتا ہے اور ہم اس وقت پڑھ نہں پاتے اور بعد میں یاد نہں رہتا کہ کونسا سپارہ پڑھنے کو ملا تھا تو ایسے دو تین سپارے اگر جمع ہو جائیں، جو معلوم نہ ہوں تو کیا ہم اِس طرح نیت کر سکتے ہیں کہ میں یہ پورا قرآن جو رمضان میں پڑھ رہی ہوں، تو جس جس نے مجھے سپارہ پڑھنے کا کہا تھا، اس سب کی بھی نیت کر سکتی ہوں ؟ ایسا کرنے سے میرا وہ ادا ہو جائیگا؟

جواب: قرآن کریم کے سپارے پڑھنا کسی کے ذمہ لگانے سے لازم نہیں ہوتا ہے، ہاں ! اگر جس نے پڑھنے کا کہا ہے، اُس سے کہہ دیا کہ میں پڑھ دونگا تو نہ پڑھنے کی صورت میں جھوٹ اور وعدہ خلافی کا گناہ لازم آئے گا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

صحیح البخاری: (16/1، ط: دار طوق النجاة)
حدثنا نافع بن مالك بن أبي عامر أبو سهيل، عن أبيه، عن أبي هريرة، عن النبي صلى الله عليه وسلم قال: " آية المنافق ثلاث: إذا حدث كذب، وإذا وعد أخلف، وإذا اؤتمن خان"

الموسوعۃ الفقھیۃ الکویتیۃ: (77/44، ط: دار السلاسل)
قال الحنفية: الخلف في الوعد حرام إذا وعد وفي نيته أن لا يفي بما وعد، أما إذا وعد وفي نيته أن يفي بما وعد فلم يف، فلا إثم عليه

رد المحتار: (427/6، ط: دار الفکر)
أن عين الكذب حرام. قلت: وهو الحق قال تعالى - {قتل الخراصون} [الذاريات: ١٠]- وقال - عليه الصلاة والسلام - «الكذب مع الفجور وهما في النار»۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 294
kisi kay zimmay quran kareem kay siparay parhna laazim karne ka hukum, Ruling on making it obligatory for someone to recite the Holy Qur'an

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Miscellaneous

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.