عنوان: ""گھر سے نکل جاؤ، گھر واپس آوں تو نظر نہ آؤ"کہنے سے طلاق کا حکم(15708-No)

سوال: کوئی شوہر اگر بیوی سے سامنے جھگڑے کے دوران یہ کہہ دے کہ گھر سے نکل جاؤ، پھر اسی لڑائی کے دوران یہ بھی کہہ دے کہ گھر واپس آؤں تو تم نظر نہ آو اور اس جملے میں اس کی نیت بھی تین طلاق کی ہو تو کیا طلاق واقع ہو جائے گی؟

جواب: واضح رہے کہ "گھر سے نکل جاؤ" کے الفاظ طلاق کنایہ کے الفاظ ہیں، اگر یہ الفاظ تین طلاق کی نیت سے بولے جائیں تو ان سے تین طلاقیں واقع ہوجاتی ہیں، لہٰذا پوچھی گئی صورت میں جب شوہر نے تین طلاق کی نیت سے یہ کہا کہ "گھر سے نکل جاؤ" تو اس کی بیوی پر تین طلاقیں واقع ہوکر حرمتِ مغلظہ ثابت ہوچکی ہے، اور اب دونوں کا میاں بیوی کی طرح ایک ساتھ رہنا جائز نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الهداية مع فتح القدير: (63/4، ط: دار الفكر)
«قال (وبقية الكنايات إذا نوى بها الطلاق كانت واحدة بائنة، وإن نوى ثلاثا كانت ثلاثا، وإن نوى ثنتين كانت واحدة . وهذا مثل قوله: أنت بائن وبتة وبتلة وحرام وحبلك على غاربك والحقي بأهلك وخلية وبرية ووهبتك لأهلك وسرحتك وفارقتك وأمرك بيدك واختاري وأنت حرة وتقنعي وتخمري واستتري واغربي واخرجي واذهبي وقومي وابتغي الأزواج) لأنها تحتمل الطلاق وغيره فلا بد من النية.

الفتاوی الهندية: (374/1، ط: دار الفكر)
(وما يصلح جوابا وردا لا غير) اخرجي اذهبي اعزبي قومي تقنعي... وفي حالة مذاكرة الطلاق يقع الطلاق في سائر الأقسام قضاء إلا فيما يصلح جوابا وردا فإنه لا يجعل طلاقا كذا في الكافي وفي حالة الغضب يصدق في جميع ذلك لاحتمال الرد والسب إلا فيما يصلح للطلاق ولا يصلح للرد والشتم كقوله اعتدي واختاري وأمرك بيدك فإنه لا يصدق فيها كذا في الهداية.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 301 Feb 20, 2024
"ghar se nikal jao, ghar wapas aao to nazar na aao" kehne se talaq ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Divorce

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.