عنوان: دارالکفر کسے کہتے ہیں؟ اور اس سے ہجرت کرنے کا حکم   (102063-No)

سوال: دارالکفر کیا ہے؟اس سے ہجرت کے احکام کیا ہیں؟ اس بات کی کچھ وضاحت فرمادیں۔

جواب:
غیر اسلامی قوانین کے نفاذ کے اعتبار سے دارالکفر کی دو قسمیں ہیں:
١- دارالکفر حقیقی : وہ ملک جہاں حکومت کفار کے ہاتھ میں ہو، مسلمانوں کو وہاں اپنے اسلامی شعائر بجا لانے میں مشقت ہو، بلکہ حکومت ایسے مسلمانوں کو نقصان پہنچانے کے درپے ہو۔

حکم: ایسے دارالکفر سے ہجرت کرکے کسی ایسے ملک جانا ضروری ہے، جہاں مسلمان آزادی سے اپنے دین پر عمل کر سکیں۔

٢- دارالکفر حکمی: ایسا ملک جہاں حکومت اور دستور غیر مسلموں کا ہو، لیکن مسلمانوں کو اپنے اسلامی شعائر کی ادائیگی میں آزادی ہو اور کوئی روک ٹوک نہ ہو۔

حکم: ایسے دارالکفر سے ہجرت کرنا لازم نہیں ہے۔

لما فی تفسیر ابن کثیر:
وأما الهجرة نفسها فهي باقية
كما قال الله سبحانه: إِنَّ الَّذِينَ تَوَفَّاهُمُ الْمَلائِكَةُ ظَالِمِي أَنفُسِهِمْ قَالُوا فِيمَ كُنتُمْ قَالُوا كُنَّا مُسْتَضْعَفِينَ فِي الأَرْضِ قَالُوا أَلَمْ تَكُنْ أَرْضُ اللَّهِ وَاسِعَةً فَتُهَاجِرُوا فِيهَا فَأُوْلَئِكَ مَأْوَاهُمْ جَهَنَّمُ وَسَاءَتْ مَصِيرًا ۝ إِلَّا الْمُسْتَضْعَفِينَ مِنَ الرِّجَالِ وَالنِّسَاءِ وَالْوِلْدَانِ لا يَسْتَطِيعُونَ حِيلَةً وَلا يَهْتَدُونَ سَبِيلًا ۝ فَأُوْلَئِكَ عَسَى اللَّهُ أَنْ يَعْفُوَ عَنْهُمْ وَكَانَ اللَّهُ عَفُوًّا غَفُورًا [النساء:98-99].

قال الحافظ ابن كثير رحمه الله عند هذه الآية:
" إن الآية تدل على وجوب الهجرة قال: وذلك مجمع عليه بين أهل العلم أن الهجرة واجبة على كل من كان في بلاد الشرك وهو لا يستطيع إظهار دينه فإنه يلزمه أن يهاجر إلى بلاد إسلامية أو إلى بلاد يستطيع فيها إظهار دينه، إلا من عجز كما قال تعالى: إِلَّا الْمُسْتَضْعَفِينَ مِنَ الرِّجَالِ وَالنِّسَاءِ وَالْوِلْدَانِ لا يَسْتَطِيعُونَ حِيلَةً [النساء:98] يعني: بالنفقة، وَلا يَهْتَدُونَ سَبِيلًا [النساء:98] يعني: لا يدرون الطريق لا يعرفون الطريق حتى يذهبوا. فَأُوْلَئِكَ عَسَى اللَّهُ أَنْ يَعْفُوَ عَنْهُمْ [النساء:99]


(مزید سوال و جواب کے لیے وزٹ کریں)
http://AlikhlasOnline.com

دیگر متفرقات میں مزید فتاوی

15 Sep 2019
اتوار 15 ستمبر - 15 محرّم 1441

Copyright © AlIkhalsonline 2019. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com