عنوان: اصحاب کہف کی تعداد اور اسماء(102089-No)

سوال: مفتی صاحب ! اصحاب کہف کی تعداد اور اسماء کیا تھے؟

جواب: واضح رہے کہ عام طور پر اصحاب کہف کی تعداد 3، 5 یا 7 بتائی جاتی ہے۔
معارف القرآن: ۵/۹۷۹ پر مفتی شفیع صاحب رحمة اللہ علیہ اصحاب کہف کے نام کے سلسلے میں لکھتے ہیں: اصل بات تو یہ ہے کہ کسی صحیح حدیث سے اصحاب کہف کے نام صحیح ثابت نہیں ہیں، البتہ تفسیری اور تاریخی روایات میں ان کے نام مختلف بیان کیے گئے ہیں، ان میں اقرب وہ روایت ہے، جس کو طبرانی نے معجم اوسط میں بسند صحیح حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہ سے نقل کیا ہے کہ اصحاب کہف کے نام یہ تھے: مُکْسَلْمِیْنَا، تَمْلیخا، مَوْطُوْنَسْ، سَنُوْنَسْ، سَارِیْنُوْتَسْ، ذُوْنَوَاسْ، کَعَسْطَطیُوْنَسْ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی القرآن الکریم:

سَیَقُوۡلُوۡنَ ثَلٰثَۃٌ رَّابِعُہُمۡ کَلۡبُہُمۡ ۚ وَ یَقُوۡلُوۡنَ خَمۡسَۃٌ سَادِسُہُمۡ کَلۡبُہُمۡ رَجۡمًۢا بِالۡغَیۡبِ ۚ وَ یَقُوۡلُوۡنَ سَبۡعَۃٌ وَّ ثَامِنُہُمۡ کَلۡبُہُمۡ ؕ قُلۡ رَّبِّیۡۤ اَعۡلَمُ بِعِدَّتِہِمۡ مَّا یَعۡلَمُہُمۡ اِلَّا قَلِیۡلٌ ۬۟ فَلَا تُمَارِ فِیۡہِمۡ اِلَّا مِرَآءً ظَاہِرًا ۪وَّ لَا تَسۡتَفۡتِ فِیۡہِمۡ مِّنۡہُمۡ اَحَدًا ﴿٪۲۲﴾

(سورۃ الکہف، آیت: 22)

وفی المعجم الاوسط:

عن الضحاك بن مزاحم، عن ابن عباس، في قول الله عز وجل: {ما يعلمهم إلا قليل} [الكهف: ٢٢] ، قال ابن عباس: «أنا من أولئك القليل مكسمليثا، وتمليخا وهو المبعوث بالورق إلى المدينة، ومرطولس، ويثبونس، وذرتونس، وكفاشطيطوس، ومنطنواسيسوس وهو الراعي والكلب اسمه قطمير، دون الكردي، وفوق القبطي، لا أظن فوق القبطي» قال أبو شبيل: قال أبي: «بلغني أنه من كتب هذه الأسماء في شيء وطرحه في حريق سكن الحريق»

(ج: 6، ص: 175، ط: دار الحرمین)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Views: 452

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Interpretation of Quranic Ayaat

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com